.

بھارت کا چین پر فوجی کمانڈروں کی بات چیت کے وقت سرحد پر’اشتعال انگیزاقدام‘کاالزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارت کی وزارتِ خارجہ نے چینی فوجیوں پر سرحدی علاقے میں ایک نئی اشتعال انگیز کارروائی میں ملوّث ہونے کا الزام عاید کیا ہے اور کہا ہے کہ انھوں نے یہ اقدام ایسے وقت میں کیا ہے جب دونوں ملکوں کے فوجی کمانڈر سرحد پر کشیدگی کے خاتمے کے لیے بات چیت کررہے تھے۔

وزارت خارجہ کے ترجمان انوراگ سری وستاوا نے منگل کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’طرفین کے فوجی کمانڈر کشیدہ صورت حال میں کمی کے لیے تبادلہ خیال کررہے تھے جبکہ چینی فوجی ادھر سرحدی علاقے میں ایک مرتبہ پھر اشتعال انگیز کارروائی کررہے تھے۔‘‘

ترجمان نے دعویٰ کیا ہے کہ ’’ بروقت دفاعی اقدام کے نتیجے میں بھارتیوں نے (چینیوں کی ) یک طرفہ طور پر صورت حال کو تبدیل کرنے کی کوششیں ناکام بنا دی ہیں۔‘‘

قبل ازیں بیجنگ کے سرکاری اخبار گلوبل ٹائمز نے ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ ’’بھارت اگر کوئی پنجہ آزمائی کرنا چاہتا ہے تو چین اس کو ماضی کی نسبت زیادہ شدید فوجی نقصان پہنچانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔‘‘