.

لیبیا میں اجرتی جنگجوئوں کی تیل کی تنصیبات اور عملے پر حملوں کی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کی نیشنل آئل فائونڈیشن کی طرف سے کل جمعہ کے روز جاری ہونے والے ایک بیان میں‌ کہا گیا ہے کہ ملک میں قومی وفاق حکومت کی مدد کے لیے آنے والے غیر ملکی اجرتی جنگجوئوں نے تیل کی تنصیبات اور ان پر کام کرنے والے عملے کو حملوں کی دھمکیاں دی ہیں۔

لیبیا کی آئل فائونڈیشن کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ کل جمعہ کے روز راس لانوف بندرگاہ پر اجرتی جنگجوئوں کی طرف سے تیل کی تنصیبات پر فائرنگ کی اور انہوں نے ملک بھر میں موجود تیل کی تنصیبات اور عملے کو حملوں‌ کا نشانے کی دھمکی دی ہے۔

آئل فائونڈیشن نے بتایا کہ عسکریت پسندوں‌ نے بندرگاہ کے اندر بھاری اسلحے اور آتشیں اسلحہ سے حملہ کیا۔

لیبی آئل فائونڈیشن کے چیئرمین مصطفیٰ صنع اللہ نے بتایا کہ قومی وفاق حکومت کے وفادار جنگجوئوں‌کے حملوں میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا تاہم فائرنگ کے نتیجے میں تیل کی تنصیبات کو نقصان پہنچا ہے۔ انہوں‌ نے خبر دار کیا کہ حکومت نواز ملیشیائوں‌ کی کارروائیوں سے ملک میں ماحولیاتی انسانی المیہ رونما ہوسکتا ہے۔

حال ہی میں ایک امریکی رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ ترکی کی جانب سے لیبیا میں قومی وفاق حکومت سے لڑائی کے لیے ہزاروں کی تعداد میں جنگجو بھیج رکھے ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس وقت لیبیا میں ترکی کے بھیجے گئے 5 ہزار جنگجو موجود ہیں جنہیں شام کی جنگ کے بعد لیبیا میں قومی وفاق حکومت کی مدد کے لیے بھیجا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں