.

کویت :قومی اسمبلی کے 10 ارکان کی وزیراعظم کے خلاف عدم تعاون کی تحریک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کویتی پارلیمان کے دس ارکان نے وزیراعظم شیخ صباح خالد الاحمد الصباح کے خلاف عدم تعاون کی تحریک پیش کردی ہے۔

کویت کی قومی اسمبلی کے اسپیکر مرزوق الغانم نے بدھ کو وزیراعظم کے خلاف عدم تعاون کی تحریک کی اطلاع دی ہے۔اس سے پہلے دو ارکان ڈاکٹر عبدالکریم الکاندری اور الحمیدی الصبیح نے الگ الگ تحریکیں پیش کی تھیں۔

کویت ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق ایک رکن پارلیمان نے وزیراعظم پر ملک سے بدعنوانیوں پر قابو پانے میں ناکامی کا الزام عاید کیا ہے۔

ارکان نے وزیراعظم پر کرونا وائرس کی وبا سے نمٹنے اور بجٹ خسارے پر قابو پانے میں ناکامی اور کویت کے آئین کی دفعہ 39 کی خلاف ورزی کا بھی الزام عاید کیا ہے۔ یہ دفعہ ابلاغ کی آزادی کی ضمانت دیتی ہے اور اس کے تحت ابلاغیات پر سنسرشپ کی اجازت نہیں ہے۔

اگست میں کویتی حکومت نے کہا تھا کہ اس کے پاس قومی خزانے میں رقوم نہیں رہی ہیں۔تب کویتی وزیرخزانہ براک الشیتان نے کہا تھا کہ حکومت کے پاس نومبر میں سرکاری ملازمین کو تن خواہوں کی ادائی کے لیے رقوم نہیں ہوں گی۔

انھوں نے کہا تھا کہ کویت کے زرِمبادلہ کے ذخائر صرف دو ارب دینار(6۰54 ڈالر) رہ گئے ہیں اور حکومت کو ہر ماہ ایک ارب 70 کروڑ دینار درکار ہوں گے۔

گذشتہ ہفتے کویتی پارلیمان کے پانچ ارکان کا کرونا وائرس کا شکار ہوگئے تھے جس کے بعد ایوان کا اجلاس ایک ہفتے کے لیے ملتوی کردیا گیا تھا۔تاہم اسپیکر مرزوق الغانم نے کہا تھا کہ ابھی تمام ارکان کے کرونا وائرس کے ٹیسٹ نہیں کیے گئے ہیں۔