ایرانی صدر حسن روحانی امریکی پابندیوں پر سیخ‌ پا، امریکا پر 'بربریت' کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جذباتیت اور غصے کی کیفیت میں ایرانی صدر حسن روحانی نے اعتراف کیا کہ امریکا نے ان کے ملک پر عاید پابندیوں سے تہران کو غیرمعمولی نقصان پہنچایا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ امریکی پابندیوں‌کے نتیجے میں ایران کو 1کھرب 50 ارب ڈالر کا نقصان پہنچا ہے۔ انہوں‌ نے امریکی پابندیوں کو 'معاشی بربریت' قرار دیا۔
روحانی نے ٹیلیویژن بیان میں الزام لگایا کہ امریکی پابندیاں غیر قانونی اور غیر انسانی ہیں۔ ان پابندیوں کے نتیجے میں تہران کو ڈیڑھ کھرب ڈالر نقصان اٹھانا پڑا ہے۔
خیال رہے کہ امریکا نے مئی 2018ء کو ایران کے ساتھ طے پائے جوہری معاہدے سے علاحدگی اختیار کرلی تھی۔ اس کے بعد امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران پر سابقہ پابندیاں بحال کردی تھیں۔


اس کے جواب میں ایران نے بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی اور جوہری معاہدے کی حدود سے تجاوز کرنا شروع کیا اور یورینیم کی مجاز مقدار سے زیادہ ذزخیرہ کرنا شروع کی ہے۔
حال ہی میں امریکا نے ایران کی وزارت دفاع ، ایران کے جوہری پروگرام اور اس کے ہتھیاروں کے پروگرام میں شامل دیگر اداروں اور شخصیات پر پابندیاں عاید کی تھیں۔


جمعرات کو امریکا نے انسانی حقوق کی مجموعی خلاف ورزیوں کا حوالہ دیتے ہوئے متعدد ایرانی عہدیداروں اور اداروں کو بلیک لسٹ کیا۔ ان سزاؤں میں ایک جج بھی شامل تھا جس کے بارے میں واشنگٹن نے کہا تھا کہ وہ ایرانی پہلوان کی سزائے موت کا ذمہ دار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں