متحدہ عرب امارات :تارکین وطن کو شہریت دینے کے لیے قانون میں ترامیم کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

متحدہ عرب امارات اپنے ہاں مروج شہریت کے قوانین میں ترامیم کررہا ہے۔ان کے تحت مختلف شرائط پر پورا اترنے والے غیرملکی تارکین وطن کو اب یو اے ای کی شہریت دی جاسکے گی۔

وزارت انصاف نے ایک سرکاری جاری کیا ہے ،اس میں شہریت کے قوانین میں مجوزہ ترامیم کی صراحت کی گئی ہے۔ترمیمی ضوابط کے مطابق اب سرمایہ کاروں ، کاروباری شخصیات ، پیشہ ور حضرات اور خصوصی ٹیلنٹ کے حامل افراد کو یو اے ای کی شہریت دی جاسکے گی۔

یو اے ای کے شہریت کے قانون میں دو اور ترامیم بھی کی گئی ہیں۔ان کے تحت امارات کا پاسپورٹ جس مقصد کے لیے جاری کیا جائے گا،اس کو اسی مقصد کے لیے استعمال کیا جاسکے گا۔دوسری ترمیم کے تحت پاسپورٹ کو صرف طے شدہ قانونی مقاصد کے لیے جاری کیا جائے گا،غیر قانونی استعمال کی صورت میں اس کو ضبط کر لیا جائے گا۔

ترمیمی قانون کے تحت درج ذیل شرائط پورا کرنے والے غیرملکیوں کو یو اے ای کی شہریت دی جاسکے گی:

1۔ ان غیرملکیوں کو اپنی اصل شہریت یا کسی دوسرے ملک کی قومیت سے دستبردار ہونا ہوگا۔

2۔ وہ ملک میں قانونی طور اور مسلسل اقامت گزیں ہوں۔

3۔ عربی زبان بولنے میں مہارت تامہ رکھتے ہوں۔

4۔ وہ روزگار کے قانونی ذرائع کے حامل ہوں۔

5۔ تعلیمی اہلیت کے حامل ہوں۔

6۔ اچھے اخلاق وکردار کے حامل ہوں۔

7۔شہریت کے درخواست گزار مرد/عورت کو کسی جرم میں سزایافتہ نہیں ہوناچاہیے۔انھیں ایسی کسی غلط روی کا مرتکب نہیں ہونا چاہیے جس کی وجہ سے عزت وتوقیر اور اعتماد کو نقصان پہنچا ہو۔

8۔ انھیں سکیورٹی سے منظوری لینا ہوگی۔

9۔ انھیں ریاست سے وفاداری کا حلف لینا ہوگا۔

شہریت ایکٹ میں ایک ترمیم کے تحت اگر کوئی غیرملکی عورت کسی اماراتی شہری سے شادی کرتی ہے تو اس کو اس قانون کی شق (5) سے مستثنیٰ قرار دیا جاسکتا ہے۔

واضح رہے کہ یو اے ای کی کابینہ نے مئی 2018ء میں ایک ترمیمی قانون کی منظوری دی تھی۔اس کے تحت پیشہ ور غیرملکیوں اور سرمایہ کاروں کو 10 سال کی طویل مدت کے لیے ’’سنہری اقامتی ‘‘ ویزے جاری کیے جاسکتے ہیں۔

ستمبر میں دبئی حکومت نے ’’ریٹائر ان دبئی‘‘کے نام سے ایک نئے پروگرام کا اعلان کیا تھا۔اس کے تحت 55 سال یا اس سے زیادہ عمر کے حامل تارکین وطن کو ریٹائرمنٹ کے ویزے کے اجرا کے لیے درخواست دینے کی پیش کش کی گئی تھی تا کہ یو اے ای کو ریٹائرمنٹ لینے والے ضعیف العمرافراد کا مسکن بنایا جاسکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں