.

سعودی نائب وزیردفاع اورامریکا کے خصوصی ایلچی برائے ایران کا علاقائی تعاون پر تبادلہ خیال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے نائب وزیر دفاع شہزادہ خالد بن سلمان نے امریکا کے خصوصی ایلچی برائے ایران ایلیٹ ابرامس سے الریاض میں ملاقات کی ہے اور ان سے دونوں ملکوں کے درمیان دوطرفہ تعلقات اور علاقائی سطح پر تعاون کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا ہے۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق دونوں نے خطے میں استحکام کو مضبوط بنانے اور لاحق سکیورٹی خدشات سے نمٹنے کے طریقوں کے بارے میں بات چیت کی ہے تاکہ ان کے مشترکہ مفادات کو پوراکیا جاسکے۔

شہزادہ خالد نے ٹویٹر پر لکھا ہے کہ ’’انھوں نے امریکا کے خصوصی ایلچی برائے ایران مسٹر ایلیٹ ابرامس سے مفید ملاقات کی ہے،ہم نے علاقائی استحکام کے تحفظ کے لیے باہمی کوششوں اور موجودہ سکیورٹی چیلنجوں سے دونوں ملکوں کے تزویراتی شراکت داری کے فریم ورک میں رہتے ہوئے نمٹنے کے بارے میں تبادلہ خیال کیا ہے۔‘‘

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ نے گذشتہ ہفتے ایران پر دباؤ بڑھانے کے لیے ہر ہفتے نئی پابندیاں عاید کرنے کا اعلان کیا تھا۔ذرائع نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ 20 جنوری کو نومنتخب صدر جو بائیڈن کی حلف برداری سے قبل ہر ہفتے ایران پر مزید پابندیاں عاید کرے گی۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ایلیٹ ابرامس نے اسی ہفتے اسرائیل کے دورے کے موقع پر بھی ایران کے خلاف نئی پابندیاں عاید کرنے کے منصوبے کے بارے میں تبادلہ خیال کیا تھا۔وہ اب سعودی عہدے داروں سے ملاقاتوں کے بعد متحدہ عرب امارات جانے والے ہیں۔

ایک روز قبل ہی امریکی محکمہ خزانہ نے ایران کی ایک فوجی فرم سے کاروبار کرنے والی چھے غیرملکی کمپنیوں اور چار افراد پر نئی پابندیاں کی ہیں اور انھیں بلیک لسٹ کردیا ہے۔