.

پومپیو کے 7 ممالک کے دورے کا آج سے آغاز، ترکی میں ایردوآن سے ملاقات نظر انداز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے آج ہفتے کے روز سے اپنے ایک اہم دورے کا آغاز کیا ہے۔ اس دورے میں وہ متعدد ممالک جائیں گے اور وہاں اعلی عہدے داران کے ساتھ اہم معاملات کو زیر بحث لائیں گے۔ ان معاملات میں انسداد دہشت گردی اور خطے کو غیر مستحکم کرنے کی ایرانی سرگرمیوں کے علاوہ مذہبی آزادی شامل ہے۔ پومپیو نے ٹویٹر پر بتایا ہے کہ ان کے دورے کا آغاز پیرس سے ہو گا۔

امریکی ذمے داران نے جمعے کے روز بتایا کہ پومپیو کے 10 روزہ دورے میں 7 ممالک شامل ہیں۔ یہ ممالک فرانس، ترکی، جارجیا، اسرائیل، سعودی عرب، امارات اور قطر ہیں۔

دوسری جانب بلومبرگ نیوز ایجنسی کا کہنا ہے کہ پومپیو آئندہ ہفتے ترکی کے دورے کے دوران صدر رجب طیب ایردوآن یا ان کی حکومت کے کسی رکن سے ملاقات نہیں کریں گے۔ اس بات کو ترک ذمے داران نے اہانت سے تعبیر کیا ہے۔

پومپیو خصوصی طور پر استنبول میں مذہبی شخصیات سے ملاقات کریں گے۔ تاہم وہ دار الحکومت انقرہ نہیں جائیں گے۔ اسی بنا پر ترکی کی وزارت خارجہ نے ان ملاقاتوں کو "انتہائی غیر مناسب" مداخلت قرار دیا ہے۔

ایک ترک ذمے دار نے شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بلومبرگ کو بتایا کہ پومپیو نے ترک وزیر خارجہ مولود چاوش اولو کی جانب سے انقرہ آنے کی دعوت کو مسترد کر دیا۔ امریکی وزیر خارجہ نے اولو سے مطالبہ کیا کہ وہ ملاقات کے لیے استنبول آئیں۔ اسی طرح اولو نے بھی پومپیو کے مطالبے کو مسترد کر دیا۔ اولو نے اس بات پر ناراضی کا اظہار کیا ہے کہ پومپیو اپنا منصب چھوڑنے سے قبل انقرہ کے دورے کو نظر انداز کر رہے ہیں۔