.

ایرانی سکیورٹی فورسز کی مختلف شہروں میں بہائیوں کے گھروں میں چھاپا مار کارروائیاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کی سکیورٹی فورسز نے ملک کے مختلف شہروں میں بہائی مذہبی اقلیت سے تعلق رکھنے والے افراد کے گھروں پر چھاپا مار کارروائیاں کی ہیں اوران کے ذاتی استعمال کی اشیاء اور بعض گھریلو سامان ضبط کر لیا ہے۔

ایران میں انسانی حقوق کے علمبردار کارکنان کے زیر انتظام ویب سائٹ ’’ہرانا‘‘ کے مطابق سکیورٹی فورسز نے چار صوبوں تہران ، البرز ، اصفہان اور مازنداران میں واقع مختلف شہروں میں اتوار کو دسیوں بہائی شہریوں کے گھروں پر چھاپے مارے ہیں۔

’ہرانا‘کے مطابق سکیورٹی فورسز نے 30 سے 50 بہائیوں کے گھروں میں مربوط انداز میں چھاپا مار کارروائیاں کی ہیں اور وہاں سے بہائی عقیدے کی کتب اور برقی آلات ضبط کر لیے ہیں۔

فوری طور پر یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ ایرانی سکیورٹی فورسز نے ان بہائیوں کے خلاف کیوں یہ کارروائی کی ہے اور آیا کوئی گرفتاری بھی عمل میں آئی ہے یا نہیں۔

واضح رہے کہ بہائی عقیدے کو ایران میں مذہب کے طور پر تسلیم نہیں کیا جاتا ہے۔بہائیوں کے خلاف بالعموم قومی سلامتی کے منافی سرگرمیوں میں ملوث ہونےکے الزامات عاید کیے جاتے ہیں۔انھیں اعلیٰ تعلیم تک رسائی سمیت بہت سے بنیادی انسانی حقوق حاصل نہیں ہیں۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی ایک کمیٹی نے گذشتہ ہفتے ایک قرار داد کی منظوری دی تھی اور اس میں ایران پر زوردیا تھا کہ وہ بہائیوں سمیت تمام ایرانیوں کے انسانی حقوق کی پاسداری کرے۔