.

برطانیہ:آکسفورڈ،آسٹرا زینیکا کی تیارکردہ کووِڈ-19 کی ویکسین کے استعمال کی منظوری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ نے آکسفورڈ یونیورسٹی اور دوا ساز کمپنی آسٹرا زینیکا کی تیار کردہ کووِڈ-19 کی ویکسین کے عام استعمال کی منظوری دے دی ہے۔وہ دنیا میں پہلا ملک ہے جس نے یہ فیصلہ کیا ہے۔

برطانوی وزارت صحت نے بدھ کواطلاع دی ہے کہ ’’حکومت نے ادویہ اور تحفظ صحت کی مصنوعات کی ریگولیٹری ایجنسی کی سفارش پر آکسفورڈ یونیورسٹی اور آسٹرا زینیکا کی تیار کردہ کووِڈ-19 کی ویکسین کی استعمال کے لیے منظوری دے دی ہے۔‘‘

آسٹرا زینیکا کے چیف ایگزیکٹو پاسکال سریٹ نے کہا ہے کہ ’’ان کی تیارکردہ ویکسین کو کووِڈ-19 کی نئی شکل کے پھیلنے کے خلاف بھی مؤثر ہونا چاہیے۔‘‘

برطانیہ اور جنوبی افریقا میں حال ہی میں کرونا وائرس کی نئی قسم ظہور پذیر ہوئی ہے۔اس کے بارے میں حکومت اور سائنس دان یہ کہہ رہے ہیں کہ یہ چین سے جنم لینے والے وائرس کے مقابلے میں زیادہ تیزی سے پھیلتی ہے۔ چناں چہ اس سے محفوظ رہنے کے لیے حفظ ماتقدم کے طور پر دنیا کے بہت سے ممالک نے برطانیہ کے ساتھ فضائی روابط منقطع کررکھے ہیں۔

آسٹرا زینیکا اور کرونا وائرس کی ویکسین تیار کرنے والی دوسری دوا ساز کمپنیوں کا کہنا ہے کہ وہ اس نئی قسم کے اثرات کا مطالعہ کررہے ہیں اور انھیں توقع ہے کہ ان کی ویکسین اس نئی شکل کے خلاف بھی مؤثر ثابت ہوں گی۔

برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن نے کووِڈ-19 کی ویکسین کی منظوری کو ’’برطانوی سائنس کی فتح‘‘قرار دیا ہے۔

برطانوی وزیر صحت میٹ ہینکاک کا کہنا ہے کہ آکسفورڈ یونیورسٹی اور آسٹرا زینیکا کی کووِڈ-19 کی ویکسین آیندہ موسم بہار تک کرونا وائرس سے بچ نکلنے کا ایک راستہ مہیا کرے گی اور تب تک ہزاروں افراد کو اس مہلک وائرس سے محفوظ کر لیا جائے گا۔