حماس کی کارروائی،غزہ میں قاسم سلیمانی کا پوسٹر پھاڑنے والا فلسطینی گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی حکمراں فلسطینی جماعت حماس کی سکیورٹی فورسز نے ایران کی القدس فورس کے مقتول کمانڈر قاسم سلیمانی کی تصویر والا بینر پھاڑنے کی پاداش میں ایک شخص کو گرفتار کر لیا ہے۔

قاسم سلیمانی کی پہلی برسی تین جنوری کو منائی جارہی ہے۔یہ دن قریب آنے پرغزہ میں حماس کے زیر اہتمام جگہ جگہ ان کی تصاویر والے بینرآویزاں کیے گئے ہیں لیکن عربوں اور فلسطینیوں نے اس فعل پر ناپسندیدگی پراظہار کیا ہے جبکہ اسرائیل کا کہنا ہے کہ ایک قاتل کو تقدس مآب شخصیت کے طور پر پیش کیا جارہا ہے۔

غزہ میں ماجدالمغربی نامی ایک فلسطینی نے قاسم سلیمانی کی تصویر والا ایک بینر پھاڑا ہے۔ان کے بھائی نے فیس بُک پر ایک پوسٹ میں ان کی گرفتاری کی تصدیق کی ہے اور اس میں قاسم سلیمانی کو’’مجرم‘‘ قراردیا ہے۔

ماجد المغربی نے بدھ کو فیس بُک پر ایک پوسٹ میں اہلِ غزہ پر زوردیا تھا کہ وہ قاسم سلیمانی کی تصاویر والے بینر اتار پھینکیں۔اس کے بعد انھوں نے اپنی ایک ویڈیو پوسٹ کی تھی۔اس میں انھیں مقتول ایرانی جنرل کی تصاویر والا بینراُتار پھینک رہے تھے۔

برطانوی خبررساں ایجنسی رائیٹرز کے مطابق حماس نے منگل کے روز غزہ کی ساحلی شاہراہ پر قاسم سلیمانی کی تصویروالا ایک بڑا بینرآویزاں کیا تھا اور فوجی ڈرل کا بھی اہتمام کیا تھا۔

اہلِ غزہ نے شہر کے مختلف علاقوں میں آویزاں قاسم سلیمانی کی تصاویر والے بینر اور پوسٹر اُتار پھینکے ہیں۔ایک اورشخص نے بھی غزہ میں ان کے پوسٹر پھاڑے ہیں اورانھیں شامیوں اور عراقیوں کا قاتل قرار دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں