.

امریکا: نینسی پیلوسی اور میک کونیل کے گھروں میں تخریب کاری کے واقعات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا میں ری پبلیکن پارٹی اور ڈیموکریٹک پارٹی کے صف اول کے دو رہ نمائوں کے گھروں میں رواں ہفتے توڑپھوڑ اور تخریب کاری کے واقعات کےبعد پولیس نے تحقیقات شروع کردی ہیں۔

ریپبلکن اکثریت کے رہ نما مچ میک کونل اور ڈیموکریٹک لیڈر اور ہاؤس کی اسپیکر نینسی پیلوسی کے گھروں میں اس ہفتے توڑ پھوڑ کی گئی ہے۔

اطلاعات کے مطابق کانگریس کے دو انتہائی طاقت ور ارکان کے گھروں میں توڑ پھوڑ متنازع 'موٹی ویشنل بل' کی منظوری کے کچھ دن بعد سامنے آئی ہے۔اس بل پر پروگریسیو ارکان اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ایک وسیع اتحاد کی طرف سے تنقید کی گئی تھی۔
ہفتے کے روز ایک بیان میں کینٹکی سے تعلق رکھنے والے ریپبلیکن سینیٹر میک کونیل نے اس پر افسوس کا اظہار کیا۔

لوئس ول میں قائم 'ڈبلیو ڈی آر بی' ٹی وی نے اطلاع دی ہے کہ سینیٹر کے گھر پر سرخ اور سفید رنگ چھڑکا گیا۔ تصویروں میں گھر کا اگلا حصہ دکھایا گیا ہے جس میں سامنے والے دروازے پر "میرا پیسہ کہاں ہے" کے الفاظ درج ہیں
لوئیس ول پولیس نے اس واقعے کا فوری طور پر جواب نہیں دیا۔

میک کونل نے اپنے بیان میں کہا کہ میں نے اپنی پیشہ ورانہ زندگی پہلی ترمیم کی جنگ لڑی ہے اور پرامن احتجاج کی وکالت کی ہے۔ میں نے تمام کینٹکی شہریوں کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہوں جنہوں‌ نے جمہوری عمل میں حصہ لیا ہے چاہے وہ مجھ سے متفق ہوں یا نہیں۔ یہ الگ بات ہے ہمارے معاشرے میں توڑ پھوڑ اور دھمکیوں کی سیاست کا کوئی مقام نہیں ہے۔

'سور سر'

جمعہ کے روز صبح تقریبا 2 بجے سان فرانسسکو پولیس کے افسران نے شہر کے ایک پڑوس میں واقع ایک گھر میں توڑ پھوڑ کی اطلاع پر کارروائی کی۔ محکمہ پولیس کے ایک ترجمان نے بتایا کہ گیراج کے دروازے پر سپرے سے پینٹ کردہ چاکنگ کی گئی ہے اور فٹ پاتھ پر ایک "سور کا سر" پڑا پایا گیا۔ سان فرانسسکو کرانیکل نے اطلاع دی ہے کہ یہ گھر محترمہ پیلوسی کی ملکیت ہے۔
محکمہ پولیس نے اضافی سوالوں کا جواب نہیں دیا ۔ یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ آیا کہ اسپیکر نینسی پیلوسی کے گھر سے ملنے والا سور کا سر اصلی تھا یا جعلی۔

منگل کے روز میک کونیل نے ایوان کی طرف سے ادائیگیوں کے حجم کو 600 ڈالر سے بڑھا کر 2000 ڈالر تک کرنے کا بل روک دیا۔ میک کونیل کے متبادل منصوبے میں محرک چیکوں کو صدر ٹرمپ کے مطالبات کی فہرست کے 2،000 حصوں تک بڑھانا تھا جس میں 2020 کے انتخابات میں ووٹر فراڈ کے ان کے الزامات کی تحقیقات اور ٹیکنالوجی کمپنیوں جیسا فیس بک ، گوگل اور ٹویٹر کے لیےقانونی تحفظات کو ختم کرنا شامل تھا۔