.

عرب ممالک اورقطر کے درمیان ٹرانسپورٹ اور تجارت ایک ہفتے میں بحال ہوجائے گی:انورقرقاش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت برائے امور خارجہ انورقرقاش نے کہا ہے کہ قطر اور اس کا بائیکاٹ ختم کرنے والے چار عرب ممالک کے درمیان آیندہ ایک ہفتے میں تجارت اور ٹرانسپورٹ بحال ہوجائے گی۔

انورقرقاش نے جمعرات کے روز صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’’ایک ہفتے کے اندر فضائی کمپنیوں ،جہازرانی اور تجارت کے لیے اقدامات کو عملی جامہ پہنایا جائے گا۔‘‘

ان کا کہنا تھا کہ ’’قطر کے ساتھ مکمل سفارتی تعلقات کی بحالی اور خلیج میں ترکی کی موجودگی سے متعلق امور کو طے کرنے میں ابھی وقت لگے گا۔بعض امور کا حل آسان ہے اور بعض کو طے کرنے میں زیادہ وقت لگے گا۔‘‘

چار عرب ممالک اور قطر کے درمیان دوبارہ تعلقات کی بحالی کے لیے منگل کے روز سعودی عرب کے تاریخی شہر العُلا میں ایک سمجھوتا طے پایا تھا۔یو اے ای کے وزیر مملکت نے اس جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ’’منگل کے سمجھوتے سے ہم نے ایک اچھا آغاز کیا تھا لیکن اعتماد کی بحالی کے لیے ہمیں بعض ایشوز درپیش ہیں۔‘‘

ان کا کہنا تھا کہ ’’دوطرفہ امور کو طے کرنے کے لیے ورکنگ گروپ تشکیل دیے جائیں گے تاکہ ان ایشوز پر پیش رفت کی جاسکے۔‘‘

واضح رہے کہ سعودی عرب ، متحدہ عرب امارات ،بحرین اور مصر نے جون 2017ء میں قطر کے ساتھ سفارتی اور تجارتی تعلقات منقطع کرلیے تھے۔ انھوں نے اس پرالاخوان المسلمون کی پشتیبانی اور دوسرے انتہا پسند گروپوں کے علاوہ ایران سے تعلقات استوارکرنے اور ان چاروں ملکوں کے داخلی امور میں مداخلت کا الزام عاید کیا تھا لیکن قطر نے ان الزامات کی تردید کی تھی۔

تب ان چاروں ممالک نے قطر کو 13 مطالبات پر مبنی ایک فہرست جاری کی تھی اوراس میں قطر سے یہ مطالبہ کیا گیا تھا کہ وہ ایران اور دہشت گرد تنظیموں کے ساتھ اپنے تعلقات منقطع کر لے، الجزیرہ نیوز نیٹ ورک کوبند کرے، قطر میں ترکی کی فوجی موجودگی کا خاتمہ کرے،مطلوب دہشت گردوں کو متعلقہ ملک کے حوالے کرے اور اپنے پڑوسی ممالک میں مداخلت کا سلسلہ بند کردے۔اس کی پالیسیوں کے نتیجے میں ہونے والے نقصانات کا ازالہ کرے اور اپنے ہمسایہ ممالک کو ان مطالبات پر عمل درآمد کی نگرانی کرنے دے۔

اس بائیکاٹ کے ساڑھے تین سال کے بعد سعودی عرب نے سوموار کی شب قطر کے ساتھ واقع اپنی فضائی ، برّی اور بحری سرحدیں دوبارہ کھولنے کا اعلان کیا تھا۔منگل کو العُلا میں خلیج تعاون کونسل ( جی سی سی) کے سربراہ اجلاس کے بعد جاری کردہ اعلامیے سے سعودی عرب سمیت چار ممالک کے قطر کے ساتھ جاری تنازع کا خاتمہ ہوگیا ہے اور اس کے ساتھ تمام شعبوں میں تعلقات بحال ہوگئے ہیں۔