.

انڈونیشیا: حادثے کا شکار ہونے والے طیارے کے سگنلز اور انسانی لاشیں ملنے کی رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

انڈونیشیا میں 'سرچ اینڈ ریسکیو ایجنسی' کے سربراہ باگس پروہیٹو کا کہنا ہے کہ حکام نے اتوار کے روز ایسے سگنلز کا پتہ چلایا ہے جو 'سری وجایا' فضائی کمپنی کے طیارے کے ریکارڈر کے ہو سکتے ہیں۔ طیارہ ہفتے کے روز دارالحکومت جکارتا سے اڑان بھرنے کے کچھ دیر بعد سمندر میں گر کر تباہ ہو گیا تھا۔ طیارہ انڈونیشیا کے شہر پونٹیانک جا رہا تھا۔

فوجی بحری جہاز پر سوار مذکورہ ایجنسی کے سربراہ نے صحافیوں کو بتایا کہ "ہمیں دو مقامات پر سگنلز ملے ہیں ، یہ بلیک بکس ہو سکتا ہے"۔ ایجنسی کے مطابق بحیرہ جاوہ میں 75 فٹ کی گہرائی میں ایک سگنل ملا ہے۔

پولیس نے اتوار کے روز بتایا کہ جس علاقے میں سری وجایا فضائی کمپنی کا بوئنگ 737-500 طیارہ غائب ہوا تھا وہاں طیارے کا ملبہ اور انسانی لاشیں ملی ہیں۔ طیارے میں کُل 62 افراد سوار تھے جن میں 10 بچے شامل ہیں۔

ہفتے کے روز اس مقام پر دو بحری جہاز بھیجے گئے تھے جہاں بدقسمت طیارے کے گرنے کا غالب گمان ہے۔

طیارے کے مسافروں کے عزیز و اقارب ہفتے کی شام پونٹیانک کے ہوائی اڈے پر تناؤ کی حالت میں متعلقہ خبروں کے منتظر رہے۔

حادثے کا شکار ہونے والا طیارہ 27 سال پرانا تھا۔اس کے اڑان بھرنے کے وقت جکارتا کے سوئیکارنو حاتا بین الاقوامی ہوائی اڈے پر موسم نا خوش گوار تھا اور وہاں بارش ہو رہی تھی۔