.

اردن کے شاہ عبداللہ دوم اورولی عہدشہزادہ حسین کووِڈ-19 کی ویکسین لگوانے والوں میں شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اردن کے شاہ عبداللہ دوم نے دارالحکومت عَمان میں کووِڈ-19 کی ویکسین لگوالی ہے۔

شاہ عبداللہ کے ساتھ ان کے چچا شہزادہ حسن اور بیٹے، اردن کے ولی عہد شہزادہ حسین نے بھی کووِڈ-19 کی ویکسین لگوائی ہے۔انھیں شاہی ہاشمی دیوان میں واقع شاہی میڈیکل سروسز کے کلینک میں ویکسین کے انجیکشن لگائے گئے ہیں۔

اردن نے گذشتہ بدھ کو کووِڈ-19 سے بچاؤ کے لیے ویکسین لگانے کی مہم کا آغاز کیا تھا۔اس مہم کے تحت ملک کی کل ایک کروڑ آبادی میں سے چالیس لاکھ نفوس کو ویکسین لگائی جائے گی۔

اردنی حکام کو امید ہے کہ آیندہ مہینوں کے دوران میں 20 سے 25 فی صد تک شہریوں کو ویکسین لگا دی جائے گی۔تاہم ملک میں 24 دسمبر کو ویکسین لگوانے کے لیے رجسٹریشن کے آغاز سے اب تک صرف دو لاکھ افراد نے اپنے ناموں کا اندراج کرایا ہے۔

اردنی حکومت نے اسی ہفتے امریکا کی دوا ساز فرم فائزر اور چینی کمپنی سائنوفارم کی تیارکردہ ویکسینوں کی پہلی کھیپ کی آمد کی اطلاع دی تھی۔اردنی وزیر صحت نَصیرعبیدات کا کہنا تھا کہ حکومت برطانیہ کی دواساز فرم آسٹرازینیکا اور جانسن اینڈ جانسن سے بھی ویکسین کے حصول کے لیے بات چیت کررہی ہے۔

اردن نے گذشتہ اتوار کو چین کی دواساز کمپنی سائنوفارم کی تیارکردہ کووِڈ-19 کی ویکسین کے ہنگامی استعمال کی منظوری تھی۔اس سے پہلے اردنی حکومت نے امریکی کمپنی فائزرکی جرمن کمپنی بائیواین ٹیک کے اشتراک سے تیار کردہ ویکسین کے استعمال کی منظوری دی تھی۔

سائنوفارم کا کہنا ہے کہ اس کی ویکسین کووِڈ-19 سے تحفظ میں 79 فی صد مؤثر ہے۔اردنی وزیرصحت نصیرعبیدات نے گذشتہ ماہ کہا تھا کہ اردن نے فائزر اوربائیو این ٹیک کی ویکسین کی 10 لاکھ خوراکیں درآمد کرنے کی منظوری دی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اردن کو گلوبل ’کوویکس پروگرام‘ کے تحت آسٹرا زینیکا کی آکسفورڈ یونیورسٹی کے اشتراک سے تیارکردہ ویکسین کی ساڑھے چھے لاکھ خوراکیں ملنے کی توقع ہے۔اس ضمن میں اردن کا امریکا کے گروپ جانسن اینڈ جانسن سے سمجھوتا طے پا گیا ہے۔اس پروگرام کے تحت دنیا کےغریب ممالک کو کووِڈ-19 کی ویکسین مفت یا ارزاں نرخوں پر مہیا کی جائے گی۔