.

پیلوسی کا آئندہ ہفتے سینیٹ کو ٹرمپ کے مواخذے کے لیے میمو بھیجنے کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ امریکی ایوان نمائندگان کی اسپیکر نینسی پیلوسی آئندہ ہفتے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو ان کے عہدے سے ہٹانے کے لیے سینیٹ کو ایک میمو بھیجیں گی۔

اس سے قبل نینسی پیلوسی نے جمعہ کو اعلان کیا تھا کہ ایک ریٹائرڈ جنرل جس نے اس سے پہلے سمندری طوفان کترینا کے دوران فوجی آپریشن کی نگرانی کی تھی،وہ کیپٹل ہل کی عمارت کے فوری حفاظتی اقدامات کا جائزہ لیں گے اور ان کی نگرانی میں عمارت کو مزید سیکیورٹی فراہم کی جائے گی۔ یہ پیش رفت ایک ہفتہ قبل صدر ٹرمپ کے حامیوں کی طرف سے عمارت پر دھاوے کے بعد سامنے آئی ہے۔

ڈیموکریٹک عہدیدار نے آئندہ بدھ کو دارالحکومت میں جو بائیڈن کے حلف برداری کا حوالہ دیتے ہوئے صحافیوں کو بتایا ہمیں حلف برداری کی تقریب کے قریب پہنچ کر پوری کمپلیکس کی جانچ پڑتال کرنا ہوگی تاکہ چونسٹھویں امریکی صدر کے انتخاب کے موقعہ پر سیکیورٹی کو فول پروف رکھا جاسکے اور کسی قسم کی گڑ بڑھ نہ ہو۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں نے ریٹائرڈ لیفٹیننٹ جنرل راسل ھونوری سے سیکیورٹی کے انفراسٹرکچر، کمانڈ اینڈ کنٹرول کے لیے مشترکہ ایجنسیوں کے آپریشنز فوری جائزہ لینے کو کہا ہے۔ پیلوسی کا کہنا تھا کہ جنرل ھونوری بحرانوں سے نمٹنے کےلیے تجربہ کار شخص ہیں۔

پلوسی نے زور دے کر کہا کہ پولیس اہلکاروں نے دارالحکومت کے تحفظ کے لیے اپنی پوری طاقت دکھائی ہے۔ انہوں‌ نے نیشنل گارڈ کی امریکی جمہوریت کے تحفظ میں کے کے لیے خدمات کی تعریف کی۔

خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے ڈونلڈ ٹرمپ کی تقریر کے بعد اور صدارتی انتخابات میں جو بائیڈن کی فتح کی سرکاری توثیق کے دوران کیپیٹل کی عمارت پر دھاوا بولاگیا تھا، جس میں پانچ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ بلوائیوں نے عمارت میں گھس کر کئی ارکان پارلیمنٹ کو یرغمال بنایا اور بڑے پیمانے پر توڑ پھوڑ اور لوٹ مار کی تھی۔

پیلوسی نے کہا کہ پچھلے ہفتے ہمیں دارالحکومت کی عمارت پر حملہ خطرناک پیش رفت تھی جس نے کانگریس کے ارکان کی جانیں خطرے میں ڈال دی تھیں۔