.

سعودی عرب:فائزر کے بعد آسٹرازینیکا اورماڈرنا کی ویکسینوں کے استعمال کی منظوری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی وزارتِ صحت نے کووِڈ-19 کی دو اور ویکسینوں کے استعمال کی منظوری دے دی ہے۔یہ برطانیہ کی دوا ساز کمپنی آسٹرا زینیکا اور امریکا کی دوا ساز فرم ماڈرنا کی تیار کردہ ویکسینیں ہیں۔

سعودی عرب نے قبل ازیں امریکا کی دواساز کمپنی فائزر کی جرمن کمپنی بائیو این ٹیک کے اشتراک سے تیارشدہ ویکسین کے استعمال کی منظوری دی تھی اور یہ اس وقت سعودی حکومت کی جانب سے شہریوں اور مکینوں کو مفت لگائی جارہی ہے۔

صوبہ شرقی کے ڈائریکٹرصحت ڈاکٹرابراہیم العریفی نے العربیہ نیوزچینل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہےکہ مملکت میں ویکسین کی وافرتعداد میں دستیابی یقینی بنانےکے لیے نئی ویکسینوں کی منظوری دی ہے۔

مملکت بھرمیں 17 دسمبر کو ویکسین لگانے کی مہم کا آغاز کیا گیا تھا اور پہلا ویکسی نیشن مرکز دارالحکومت الریاض میں قائم کیا گیا تھا۔اس کے بعد دوسرے علاقوں میں مراکز قائم کیے گئے تھے۔

وزارتِ صحت کے مطابق اب تک 20 لاکھ سے زیادہ افراد نے کووِڈ-19 کی ویکسین لگوانے کے لیے اپنا اندراج کرایا ہے اور ڈھائی لاکھ سے زیادہ افراد کو ویکسین لگائی جاچکی ہے۔

وزارتِ صحت نے شرائط پر پورا اُترنے والے تمام شہریوں اورمکینوں پرزوردیا ہے کہ وہ کسی ایک ویکسین کا انجیکشن لگوانے کے لیے اپنے ناموں کا اندراج کرائیں۔اس کا کہنا ہے کہ ابھی تک ویکسین کے ضمنی اثرات کی کوئی اطلاعات سامنے نہیں آئی ہیں۔

سعودی وزیرصحت ڈاکٹر توفیق الربیعہ نے سات جنوری کو کووِڈ-19 کی ویکسین دوسری مرتبہ لگوانے والے شہریوں اور مکینوں کے لیے آن لائن ’’صحت پاسپورٹ‘‘ کے اجرا کا اعلان کیا تھا۔

یہ ’’صحت پاسپورٹ‘‘ سعودی عرب کی وزارت صحت نے سعودی اتھارٹی برائے ڈیٹا اور مصنوعی ذہانت (سدایا) کے تعاون سے تیارکیا ہے۔کووِڈ-19 کی ویکسین کی دوسری خوراک لگوانے والے شخص کو چند سیکنڈز ہی میں توکلنا ایپ پرخودکار طریقے سے صحت پاسپورٹ جاری ہوجاتا ہے۔

سعودی عرب دنیا کا پہلا ملک ہے جہاں کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے کاوشوں کے حصے کے طور پر ’’صحت پاسپورٹ‘‘ جاری کیے جارہے ہیں۔اس سے حکام کو ویکسین لگوانے والے افراد کی شناخت میں مدد ملے گی۔