.

اپنے گھر کے صحن کو آرٹ گیلری بنانے والے سعودی نوجوان سے ملئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں آرٹ کے شوقین ایک نوجوان نے اپنے گھرکے صحن کو فن پاروں کی آرٹ گیلری میں تبدیل کرنے کے ساتھ ساتھ آس پاس کی خالی گھروں کی دیواروں اور بجلی کے ٹرانسفارمرز کو بھی مصوری کے عمدہ نمونوں سے سجا کر علاقے کو چار چاند لگا دیے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے آرٹسٹ 'عدنان الفہمی نے بتایا کہ اس نے سکول کے زمانے سے ہی ڈرائینگ اور لکیریں لگا کر گرافٹی شروع کی۔ الفہمی نے بتایا کہ اس فنکارانہ شوق کا باقاعدہ آغاز چار سال قبل ہوا۔ ڈرائنگ کی آرٹ سے آپ اپنے اندر کی سوچ کو مختلف شکلوں اور رنگوں کو فن پاروں میں ڈھالتے ہیں۔

اس نے کہا کہ گرافٹی کا فن صدیوں پرانا ہے۔ یہاں تک کہ فراعنہ، یونان اور رومن ادوار میں‌ بھی یہ فن ملتا ہے مگر وقت کے ساتھ ساتھ اس کے مختلف نئے پہلو سامنے آئے۔ یہ فن ترقی اور جدت کے مراحل طے کرتا رہا ہے۔

قدیم زمانے میں دیواروں پر گرافٹی، فرش پر مختلف نقوش تیار کرنے کے علاوہ مختلف نوعیت کے طریقے اپنائے جاتے رہے ہیں۔ فن پاروں کی تیاری کے لیے اسپرے، پینٹ برش یا قلم کا استعمال کیا جاتا رہا ہے۔ اب اس فن کو خاندان کی سپورٹ اور دوستوں کی پسندیدگی کی وجہ سے مزید فروغ حاصل ہو رہا ہے۔