.

’’خطے کے امن کے حوالے سے سوڈان اور سعودی عرب کا ایک ویژن ہے‘‘

ایتھوپیا کے ساتھ سرحدی علاقے میں جنگ خطرناک ہو سکتی ہے: خود مختار کونسل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سوڈان میں خود مختار کونسل کے ایک رکن نے باور کرایا ہے کہ خطے میں امن کے حوالے سے خرطوم اور ریاض کا ایک ویژن ہے۔

مذکورہ رکن محمد الفکی سلیمان نے بدھ کے روز اپنے بیان میں کہا کہ "سعودی عرب کا دورہ کامیاب اور اہم تھا .. خطے کی سیکورٹی کے حوالے سے ہم مملکت کے ساتھ ایک ویژن میں شریک ہیں"۔

سلیمان نے واضح کیا کہ سوڈان نے سعودی عرب سے سیاسی سپورٹ طلب کی ہے تا کہ سوڈان اور ایتھوپیا کے درمیان سرحد پر نشان لگانے کی کوششیں بار آور ہو سکیں۔ مزید یہ کہ دونوں ملکوں کے بیچ تکنیکی کمیٹیوں کے کام کا دوبارہ آغاز عمل میں آ سکے۔

خود مختار کونسل کے رکن کے مطابق (ایتھوپیا کے ساتھ سرحد کے) علاقے میں کسی بھی جنگ کا چِھڑنا خطے کے لیے خطرناک ہو گا۔ علاوہ ازیں یہ جنگ بحر احمر کی سیکورٹی پر بھی اثر انداز ہو سکتی ہے۔

اس سے قبل منگل کے روز خرطوم نے باور کرایا تھا کہ سوڈانی فوج ایتھوپیا کے ساتھ جارحیت میں اضافہ نہیں چاہتی ہے۔ سوڈانی فوج ایتھوپیا کی اراضی میں داخل نہیں ہوئی تاہم اس کے باوجود ادیس بابا حکومت سرحدی حدود کے مسئلے کو تنازع میں بدلنے کی کوشش کر رہی ہے۔ سوڈانی وزیر اعظم کے مشیر نے العربیہ کو دیے گئے بیان میں سرحدی حدود یا سرحدی حد بندی کے بارے میں بات کرنے سے انکار کر دیا۔