.

سعودی عرب:کووِڈ-19 کی ویکسین کے بعد کیمیکل لیڈر’سابک‘ کی آمدن میں اضافہ متوقع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی کیمیکل بنانے والی سب سے بڑی فرم ’سعودی بیسک انڈسٹریز کارپوریشن‘(سابک) نے اس توقع کا اظہار کیا ہے کہ رواں سال کے دوران میں کووِڈ-19 کی ویکسین آنے کے بعد اس کی مصنوعات کی فروخت اور آمدن میں اضافہ ہوگا۔

سعودی آرامکو کے زیرانتظام الریاض میں قائم سابک نے 2020ء میں تجزیہ کاروں کے تمام اندازوں کو غلط ثابت کیا ہے اور اس نے لاک ڈاؤن اور دیگر پابندیوں کے باوجود منافع کمایا ہے۔

اس کا کہنا ہے کہ رواں سال کے دوران میں ویکسین آنے کے بعد کرونا وائرس کی وَبا کے خاتمے کی امید بندھی ہے اور اس کی سالانہ آمدن میں دو سے پانچ فی صد تک اضافے کی توقع ہے۔

سابک کے ایک بیان کے مطابق اس نے 2020ء میں چار کروڑ ریال (ایک کروڑ سات لاکھ ڈالر) خالص آمدن کمائی ہے۔2019ء کے مقابلے میں یہ رقم بہت تھوڑی ہے۔تب اس کو پانچ ارب 20 کروڑ ریال آمدن حاصل ہوئی تھی۔ بلومبرگ کے ایک سروے کے مطابق تجزیہ کاروں کو سابک کے تیس کروڑ ریال خسارے کی توقع تھی کیونکہ کرونا وائرس کی وبا پھیلنے کے بعد کیمیکل مصنوعات کی طلب میں نمایاں کمی واقع ہوئی تھی۔

دسمبر میں کمپنی کے بورڈ نے 2020ء کی دوسری ششماہی کے لیے فی حصص 1۰5 ریال منافع کا اعلان کیا تھا۔اس طرح اس کے حصص کی شرح منافع میں پہلی ششماہی کے مقابلے میں کوئی تبدیلی رونما نہیں ہوئی تھی۔

واضح رہے کہ سعودی آرامکو نے گذشتہ سال سعودی عرب کے خودمختار فنڈ سے سابک کے 70 فی صد اثاثے 69 ارب ڈالر میں خرید کرلیے تھے۔اس کے بعد کمپنی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر یوسف البنیان نے ایک نیوز کانفرنس میں کہا تھا کہ دونوں کمپنیوں کے ادغام کے بعد ان کی آمدن میں سالانہ تین سے چارارب ڈالر تک اضافہ ہونا چاہیے اور اس میں سابک کا حصہ 1۰5 سے 1۰8 ارب ڈالر تک ہونا چاہیے۔