.

ابوظبی: اجتماعات پر پابندی ، مالوں، بیچز اورریستورانوں میں تعداد کم رکھنے کی ہدایت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کے دارالحکومت ابوظبی میں کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے اتوار کو نئی پابندیاں نافذ کردی گئی ہیں۔

ابوظبی کے میڈیا دفتر نے ایک بیان میں کہا ہے کہ نئی پابندیاں فوری طور پر نافذالعمل ہوں گی۔ان کے تحت ابوظبی شہر میں اجتماعات اور تقریبات کے انعقاد کی سختی سے ممانعت کردی گئی ہے،فلم تھیٹر بند رہیں گے۔شادیوں اورخاندانی اجتماعات میں صرف دس افراد شریک ہوسکیں گے۔

میڈیا دفتر کے سرکلر کے مطابق اب کسی متوفیٰ کی تجہیز وتدفین میں زیادہ سے زیادہ بیس افراد کو شرکت کی اجازت ہوگی۔

شاپنگ مالوں میں ان کی کل گنجائش کے مقابلے میں صرف 40 فی صد افراد کو جانے کی اجازت ہوگی۔ریستورانوں ، کیفے ، ہوٹلوں اور سرکاری بیچز اور پارکوں میں 60 فی صد تک افراد کو آنے کی اجازت ہوگی۔

نجی ملکیتی بیچز اور پیراکی کے تالابوں (سوئمنگ پولز) کو ان کی کل گنجائش کے مقابلے میں صرف 50 فی صد تک کام کرنے کی اجازت ہوگی۔کروناوائرس سے بچاؤ کے لیے حفاظتی احتیاطی تدابیر کے تحت جیم خانوں میں بھی صرف 50 فی صد افراد آسکتے ہیں۔

سرکلر میں مزید کہا گیا ہے کہ ٹیکسیوں میں گنجائش 45 فی صد اور بسوں میں 75 فی صد تک محدود کی جارہی ہے۔اس سے زیادہ تعداد میں سواریاں بٹھانے پر پابندی ہوگی۔

امارت ابوظبی کی حکومت نے ہفتے کے روز سرکاری ملازمین پر ہر ہفتے کووِڈ-19 کا ٹیسٹ کرانے کی پابندی لازمی قرار دے دی تھی اور دفاتر میں صرف 30 فی صد ملازمین کو حاضرہونے کی ہدایت کی تھی۔

ابوظبی کے میڈیا دفتر نے ہفتے کے روز ایک ٹویٹ میں اطلاع دی تھی کہ ’’محکمہ گورنمنٹ سپورٹ نے سرکاری اور نیم سرکاری اداروں میں ملازمین کی حاضری کم کرنے کی منظوری دی ہے اور اب صرف 30 فی صد ملازمین دفاتر میں حاضر ہوں گے۔اس فیصلے کا مقصد امارت میں کروناوائرس کو پھیلنے سے روکنا،احتیاطی تدابیر کا نفاذ اور ملازمین اور ان کے خاندانوں کی صحت کا تحفظ ہے۔‘‘

یو اے ای میں دسمبر کے بعد کرونا وائرس کے یومیہ کیسوں کی تعداد میں اضافے کا رجحان رہا ہے اور روزانہ کووِڈ-19 کے تین ہزار سے زیادہ کیسوں کا اندراج کیا جارہا ہے۔اس کے ساتھ ویکسین لگانے کی مہم بھی بڑی تیزی سے جاری ہے اور اب تک تیس لاکھ سے زیادہ افراد کو کووِڈ-19 کی ویکسین لگائی جاچکی ہے۔