’نازک‘ جمہوریت کا تحفظ ضروری ہے: ٹرمپ کی بریت پر بائیڈن کا بیان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ اگرچہ ڈونلڈ ٹرمپ کو مظاہرین کو ’بغاوت پر اکسانے‘ کے الزام سے بری کر دیا گیا ہے لیکن کانگریس پر حملوں سے واضح ہو گیا ہے کہ جمہوریت ’نازک‘ ہے۔

صدر جو بائیڈن نے یہ بیان سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو گذشتہ روز مواخذے کی کارروائی میں الزامات سے بریت ملنے کے بعد دیا۔ بیان میں صدر جو بائیڈن کا کہنا تھا کہ سینیٹ میں ہونے والے حتمی ووٹ نے صدر ٹرمپ کو قصور وار ٹھہراتے ہوئے سزا یافتہ نہیں قرار دیا، لیکن الزامات کے متن پر کوئی تنازع نہیں ہے۔

سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ چھ جنوری کو کیپٹل ہل پر ہنگامہ آرائی اور ہجوم کو بغاوت پر اکسانے کے الزام پر مواخذے کے مقدمے سے بری ہو گئے ہیں۔ امریکی سینیٹ ان پر الزامات ثابت کرنے اور ان کے خلاف مواخذے کی کارروائی کرنے میں دو تہائی اکثریت حاصل کرنے میں ناکام رہی ہے۔

امریکی ایوان نمائندگان میں سات ریبپلکن سینٹرز سمیت 57 سینیٹرز نے انھیں سزا دینے کے حق میں ووٹ دیا جبکہ 43 سینیٹرز نے اس کے خلاف ووٹ ڈالا۔ صدر ٹرمپ کو سزا دلوانے کے لیے کل 67 ووٹوں کی ضرورت تھی تاہم دس ووٹوں کی کمی سے انھیں الزامات سے بری کر دیا گیا ہے۔

اپنی بریت کے بعد، سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے اس مقدمے کی مذمت کی اور کہا کہ ' یہ تاریخ کی سب سے بڑی الزام تراشی ہے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں