.

یو اے ای:ضعیف العمرشہریوں کو گھروں میں ویکسین مہیا کی جائے گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کی وزارت صحت نے ضعیف العمر افراد کو ان کے گھروں میں کرونا وائرس کی ویکسین مہیا کرنے کا اعلان کیا ہے۔

یو اے ای کی سرکاری خبررساں ایجنسی وام کے مطابق ’’وزارتِ صحت سینیر شہریوں کو خصوصی ترجیح دیتی ہے اور انھیں معاشرے کی ترقی میں ان کے عظیم کردار کے پیش نظر صحت کی غیر معمولی خدمات مہیا کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔‘‘

گھروں میں ویکسین لگانے کی سہولت یواے ای کے شہریوں اور مکینوں دونوں کے لیے دستیاب ہوگی۔تاہم وزارت نے اس سہولت سے استفادہ کرنے والوں کی کم سے کم اور زیادہ سے زیادہ عمر بیان نہیں کی ہے۔

متحدہ عرب امارات میں کووِڈ-19 کی ویکسین لگوانے والوں کی کم سے کم عمر 16 سال مقرر کی گئی ہے۔یو اے ای میں شامل سات امارتوں میں تمام مکینوں اور شہریوں کو حکومت کی جانب سے مفت ویکسین لگائی جارہی ہے۔ان میں چھے امارتوں میں چین کی سرکاری دوا ساز کمپنی سائنو فارم کی ساختہ ویکسین لگائی جارہی ہے۔

البتہ امارت دبئی میں شہریوں اورمکینوں کوسائنو فارم کے علاوہ امریکی کمپنی فائزر کی جرمن کمپنی بائیواین ٹیک کے اشتراک سے تیارشدہ ویکسین لگائی جارہی ہے۔شہری اور مکین ان دونوں میں سے کوئی ایک ویکسین رضاکارانہ طورپر لگواسکتے ہیں۔

قبل ازیں یو اے ای کی وزارت صحت نے سوموار کو کرونا وائرس کے 3123 نئے کیسوں ، 4892 مریضوں کے صحت یاب ہونے اور 13 مریضوں کی وفات کی اطلاع دی تھی۔یو اے ای میں اب تک کروناوائرس کے کل کیسوں کی تعداد 351895 ہوچکی ہے۔ان میں سے 336731 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں اور1027 مریض وفات پاچکے ہیں۔

یو اے ای میں اب تک کووڈ-19 کی ویکسین کی پانچ لاکھ پچاس ہزار خوراکیں لگائی جاچکی ہیں۔وام نے ہفتے کے روز اطلاع دی تھی کہ یو اے ای میں ہر100 افراد میں ویکسین کی 50۰61 خوراکیں تقسیم کی جاچکی ہیں۔

شعبہ صحت کی ترجمان ڈاکٹر فریدہ الحوسنی نے گذشتہ ہفتے کہا تھا کہ یو اے ای ویکسین کی شہریوں اور مکینوں میں تقسیم کی شرح کے اعتبار سے دنیا میں دوسرے نمبر پر ہے۔