.

یو اے ای لبنان کی حمایت کرتا ہے: محمد بن زاید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات نے لبنان کی مکمل حمایت کرتے وہاں نئی حکومت کی جلد تشکیل کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔ یہ بات ابوظبی کے ولی عہد اور اماراتی مسلح افواج کے ڈپٹی کمانڈر نے جمعہ کے روز لبنان کے نامزد وزیر اعظم سعد الحریری سے جمعہ کو ایک ملاقات کے بعد کہی۔

یو اے ای کی سرکاری خبر رساں ایجنسی ’’وام‘‘ کے مطابق دونوں راہنماؤں نے لبنان کی تازہ صورت حال اور وہاں نئی حکومت کی تشکیل سے متعلق کی جانے والی کوششوں کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا۔

شیخ محمد بن زاید نے متحدہ عرب امارات کی لبنانی عوام اور ان کی اپنے ملک میں اتحاد، استحکام اور ترقی سے متعلق امنگوں کی تائید کی۔

ملک میں پندرہ سال [1975-1990] جاری رہنے والی خانہ جنگی کے بعد لبنان اس وقت بدترین معاشی بحران اور ملک گیر احتجاج کے دور سے گذر رہا ہے۔

لبنان میں کرنسی کی قدر میں روز بروز گراوٹ کی وجہ سے افراط زر اور مہنگائی کی شرح آسمان سے باتیں کر رہی ہے۔ بینکوں کا نظام مفلوج ہو کر رہ گیا ہے اور لبنان کی نصف آبادی غربت کی دلدل میں پھنسی ہوئی ہے۔

لبنان کے باہم سیاستدان اس ساری صورت حال میں اب بھی کسی نئی حکومت کی تشکیل پر منتفق نہیں ہو پا رہے ہیں جس کی وجہ سے ملک کو امداد دینے والے ادارے ناراضی کے ساتھ ملک میں معاشرتی تباہی کی وارننگز جاری کر رہے ہیں۔

سعد الحریری کو گذشتہ برس اکتوبر میں نئی حکومت بنانے کا فریضہ سونپا گیا تھا لیکن وہ ابھی تمام جماعتوں بشمول طاقتور شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے ساتھ کابینہ کی وزارتوں کی تقسیم کے کسی فارمولے پر پہنچنے میں کامیاب نہیں ہو سکے۔

اماراتی راہنما نے لبنان کے لیے پرخلوص تمناؤں کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ وقت جلد آئے جب ملک میں قومی مفاہمت کامیاب ہو تاکہ قومی ترجیحات کے مطابق عوام کو درپیش چیلنجز کا حل تلاش کیا جا سکے۔

سعد الحریری نے گذشتہ اتوار کو ایک بیان میں کہا تھا کہ لبنان عرب ملکوں کی مدد کے بغیر درپیش بحران سے نہیں نکل سکتا۔

تاریخی اعتبار سے خلیجی ریاستیں مشرق وسطیٰ کے اس شورش زدہ ملک کی مالی امداد کرتی چلی آئی ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ 2019 میں لبنان کے لیے مالی مدد کی یقین دہانی کرائی تھی، تاہم خلیجی ریاستوں کو لبنان میں حزب اللہ کے بڑھتے ہوئے اثر ونفوذ پر گہری تشویش ہے۔

وام کے مطابق سعد الحریری نے لبنان میں کرونا وائرس کے خاتمے اور کںڑول سمیت مختلف محاذوں پر متعلق متحدہ عرب امارات کے موقف پر تحسین کی۔