.

ایران کا جوہری معاملہ نازک مرحلے میں ہے : چین کا انتباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

چین کی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ ایران کے جوہری پروگرام کے حوالے سے پیش رفت "نازک نقطے" تک پہنچ چکی ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ ایران پر سے پابندیوں کا اٹھانا جمود توڑنے کے لیے بنیادی امر ہے۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان وینگ وِنبِن نے بدھ کے روز ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ "ایران کے جوہری معاملے کے سلسلے میں موجودہ صورت حال نازک مرحلے سے گزر رہی ہے جہاں مواقع اور چیلنج موجود ہیں"۔

چینی ترجمان کا یہ بیان ایران کی جانب سے اپنی جوہری تنصیبات کے عالمی معائنے کی کارروائیوں کو سرکاری طور پر محدود کرنے کے آغاز کے ایک روز بعد سامنے آیا ہے۔ تہران کی اس کوشش کا مقصد یورپی ممالک اور امریکا پر دباؤ ڈالنا ہے تا کہ وہ ایران پر عائد اقتصادی پابندیاں اٹھا لیں اور سال 2015ء میں طے پانے والے جوہری معاہدے کی طرف واپس لوٹیں۔

عالمی سلامتی کونسل کے ایک مستقل رکن کی حیثیت سے چین بھی اس سمجھوتے میں ایک فریق ہے۔ یہ سمجھوتا "مشترکہ جامع عملی منصوبے" کے نام سے معروف ہے۔ چین کے ایران کے ساتھ دوستانہ اور قریبی اقتصادی تعلقات ہیں۔