.

امریکا نے پاسداران انقلاب کے دو عہدیداروں پر پابندیاں عاید کر دیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزارت خارجہ نے کل منگل کے روز ایرانی پاسداران انقلاب کے دو سینیئر تفتیش کاروں کو انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں کے الزام میں بلیک لسٹ کر دیا ہے۔

یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب دوسری طرف ایران میں انسانی حقوق کی پامالیوں اور زیر حراست سیاسی قیدیوں پر تشدد میں ملوث اہلکاروں کے خلاف امریکی عدالتوں میں مقدمات دائر کیے جا رہے ہیں۔ امریکی وزارت خارجہ کے مطابق پاسداران انقلاب کے دو سینیئر تفتیش کاروں علی ھمتیان اور مسعود صفداری کو بلیک لسٹ کرتے ہوئے دونوں پر پابندیاں عاید کر دی ہیں۔

وزارت نے ایک بیان میں اس بات کی تصدیق کی ہے کہ بلیک لسٹ ہونے والے پاسداران انقلاب کے تفتیش کار ایران میں 2019 اور 2020 میں ہونے والے احتجاج کے دوران زیر حراست سیاسی قیدیوں اور دوسرے لوگوں کے خلاف تشدد اور ظالمانہ برتاو اور غیر انسانی سزائیں دینے میں ملوث ہیں۔
بیان میں یہ بھی امریکا نے زور دیا ہے کہ امریکا ایران میں خلاف ورزیوں اور زیادتیوں کے ذمہ داران پر پابندیاں عائد کرنے کے لئے تمام مناسب وسائل کو بروئے کار لاتا رہے گا۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ ایرانی رجیم سیاسی قیدیوں پر تشدد کے معاملات کو فرقہ وارانہ بنیادوں پر قائم نظام کی حفاظت کی آڑ میں سند جواز فراہم کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ فارسی ویب سائٹ'ایران وائر' کے مطابق امریکا میں ایرانی عہدیداروں کے خلاف غیرانسانی سلوک کی وجہ سے 10 ہزار شکایات کا اندراج کیا گیا ہے۔ ان درخواستوں پر ایران کو ایک کھرب ڈالر کے برابر نقصان اٹھانا پڑ سکتا ہے۔