.
لیبیا تنازع

لیبیا میں قومی وفاق کی وفادار ملیشیائوں میں لڑائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کے دارالحکومت طرابلس میں جمعرات کےروز قومی وفاق حکومت کی وفادار دو ملیشیاوں میں آپس میں‌ لڑائی چھڑ گئی جس کے نتیجے دارالحکومت ایک بار پھر بدامنی کی لپیٹ میں آ گیا۔

اطلاعات کے مطابق طرابلس میں قومی وفاق کی فادار دو تنظیموں 'اسود تاجورا' اور 'الضمان' کے درمیان جھڑپیں ہوئیں۔ یہ دونوں گروپ قومی وفاق کے وفادار سمجھے جاتے ہیں۔ قومی وفاق حکومت کے دو وفادار گروپوں کی باہمی لڑائی سے لیبیا میں جاری سیکیورٹی بحران کی شدت کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔ یہ لڑائی ایک ایسے وقت میں ہو رہی ہے جب قومی وفاق حکومت اور اس کی حریف نیشنل آرمی مخلوط قومی حکومت کی تشکیل کی کوششیں کر رہی ہیں۔

یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب نو منتخب وزیراعظم عبدالحمید دبیبہ طرابلس پہنچے ہیں۔ وہ پارلیمنٹ سے اعتماد کا ووٹ لینے کے بعد اپنی کابینہ کی تشکیل کا اعلان کریں گے۔

سماجی کارکنوں کا کہنا ہے کہ مشرقی طرابلس میں تاجورا کے اطراف میں لڑائی کے دوران درمیانے درجے کے ہتھیاروں کے استعمال کی آوازیں سنی گئی ہیں۔ لڑائی چھڑنے کے بعد مشرقی طرابلس میں سڑکیں سیل کردی گئیں اور ٹریفک کو بند کردیا گیا تھا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اسود تاجورا اور الضمان گروپوں میں جھڑپیں اس وقت شروع ہوئیں جب اسود تاجورا نے الضمان ملیشیا کے زیر حراست جنگجووں کو رہا کرنے سے انکار کیا۔ اگرچہ جھڑپیں رک گئی ہیں تاہم کشیدگی دوبارہ شروع ہونے کا اندیشہ ہے۔

خیال رہے کہ تاجورا شہر میں ایک سے زاید عسکری گروپ سرگرم ہیں جو قومی وفاق حکومت کے وفادار خیال کیے جاتے ہیں۔ ان میں اسود تاجورا اور الضمان بھی شامل ہیں۔ الضمان کو طرابلس کا طاقت ور اور سخت گیر گروپ قرار دیا جاتا ہے۔ تاجورا سے تعلق رکھنے والے جنگجووں کی بڑی تعداد اسود تاجورا اور باب تاجورا کے ساتھ بھی منسلک ہے۔