.
یمن اور حوثی

حوثی ملیشیا کا سعودی عرب پر ایک اور ڈرون حملہ ناکام، ڈرون کو یمن میں مار گرایا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں آئینی حکومت کے دفاع کے لیے قائم کردہ عرب عسکری اتحاد نے ایرانی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا کی طرف سے سعودی عرب پر حملے کے لیے بھیجا جانے والا بمبار ڈرون طیارہ یمن کی فضائی حدود میں مار گرایا ہے۔

عرب اتحاد کے ترجمان ترکی المالکی نے بتایا کہ ہفتے کے روز حوثی ملیشیا نے سعودی عرب کی سمت میں ایک بمبار ڈرون بھیجا جسے یمن کی فضائی حدود کے اندر ہی مار گرایا گیا۔

قبل ازیں سعودی روئل ایئر ڈیفنس فورسز نے جمعے کی شب ایک بیلسٹک میزائل اور ایک دھماکا خیز ڈرون طیارہ تباہ کر دیا۔ یہ میزائل اور طیارہ دہشت گرد حوثی تنظیم کی جانب سے مملکت میں جازان اور خمیس مشیط کی سمت بھیجا تھا۔

سعودی دفاعی نظام
سعودی دفاعی نظام

یمن میں آئینی حکومت کو سپورٹ کرنے والے عرب اتحاد نے واضح کیا ہے کہ اس طرح کی کوششوں کا شمار جنگی جرائم میں ہوتا ہے۔ اتحاد نے زور دیا کہ اس کی فورسز بین الاقوامی قانون کے مطابق شہریوں کے تحفظ کے واسطے مطلوب عملی اقدامات کر رہی ہیں۔

دوسری جانب خلیج تعاون کونسل کے سکریٹری جنرل ڈاکٹر نائف الحجرف نے شہریوں اور شہری تنصیبات کو نشانہ بنانے کی کوششوں کی مذمت کی ہے۔ الحجرف کے مطابق حوثی ملیشیا کے دہشت گرد حملوں کا سلسلہ جاری رہنا اس بات کا عکاس ہے کہ ایران نواز ملیشیا عالمی برادری کو صریح طور پر چیلنج کر رہی ہے اور وہ تمام تر بین الاقوامی قوانین اور روایات کی دھجیاں اڑا رہی ہے۔ ڈاکٹر الحجرف نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ حوثی ملیشیا کے حوالے سے اپنی ذمے داریوں کو پورا کرے تا کہ اہم تنصیبات اور شہریوں کو نشانہ بنانے کی یہ دہشت گرد کارروائیاں روکی جا سکیں۔

خلیج تعاون کونسل کے سکریٹری جنرل نے عرب اتحاد اور سعودی فضائی دفاع کی فورسز کے خبردار رہنے اور ان کی صلاحیت کو سراہا جو حوثی ملیشیا کے ہر حملے کو ناکام بنا رہی ہیں۔