.

جمہوریہ چیک نے جاسوسی کے الزام میں 18 روسی سفارت کار بے دخل کر دیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جمہوریہ چیک نے اعلان کیا ہے کہ اس نے 18 روسی سفارتکاروں کو ملک بدر کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ان سفارت کاروں پر 2014 میں ایک گولہ بارود ڈپو میں بڑے دھماکے میں‌ملوث ہونے اور جاسوسی کا الزام عاید کیا گیا ہے۔

چیک وزیر اعظم آندرج بابیس نے ہفتے کے روز کہا کہ چیک انٹلیجنس سروسز نے بڑے پیمانے پر دھماکے میں روسی فوجی ایجنٹوں کے ملوث ہونے کے واضح ثبوت فراہم کیے تھے جس میں دو افراد کی ہلاکت ہوئی تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ جمہوریہ چیک ایک خودمختار ملک ہے اور انہیں ان نتائج پر ردعمل ظاہر کرنا چاہیے۔

وزیر داخلہ جان ہماچک جو وزیر خارجہ بھی ہیں نے کہا کہ روسی سفارتخانے کے 18 ملازمین کی واضح طور پر روسی فوجی جاسوس کے طور پر شناخت کی گئی تھی اور انہیں 48 گھنٹوں کے اندر اندر ملک چھوڑنے کا حکم دیا گیا ہے۔