.

امریکی مفادات پر ضرب کے لیے ایران، افغانستان میں نفوذ بڑھا رہا ہے: جنرل میک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی سنٹرل کمانڈ کے کمانڈر جنرل کینتھ میک کینزی نے کہا ہےکہ ایران امریکی مفادات کونقصان کرنے کے لیے افغانستان میں اپنا اثر ورسوخ بڑھانا چاہتا ہے۔

جمعرات کے روز انہوں نے آنے والے مہینوں میں تمام غیر ملکی افواج کی افغانستان سے واپسی کے بعد وہاں پر افغان سکیورٹی فورسز کی سرزمین پر کنٹرول برقرار رکھنے کی صلاحیت کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے سینیٹ کی آرمڈ سروسز کمیٹی کے ایک اجلاس کے دوران کہا کہ پریشانی کی بات یہ ہے کہ اس وقت زمین پر اپنا کنٹرول برقرار رکھنے کی افغان فوج کی قابلیت کس حد تک ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ مُجھے ہماری روانگی کے بعد افغان فضائیہ کی ہوابازی کی صلاحیت خاص طور پر اس کے بعد جب ہم افغانستان میں فضائی مدد نہیں کریں گے افغان فوج کیسے صورت حال پر قابو پا سکے گی۔

امریکی محکمہ دفاع کے ایک عہدیدار نے جمعرات کو کہا کہ امریکی فوج نے یکم مئی سے افغانستان سے فوجی انخلا کے آخری مرحلے کے آغاز سے قبل مقامی سطح پر سامان کی فراہمی کےمعاہدے ختم کرنا شروع کردیے ہیں۔

"رائیٹرز" نے ایک امریکی جنرل کے حوالے سے بتایا ہے کہ تحریک طالبان اپنی صفوں میں تقریبا 50 ہزار ارکان شامل کیے ہیں۔

صدر جو بائیڈن نے بیس سال کی فوجی کارروائیوں کے بعد امریکا کے ذریعے لڑی جانے والی سب سے طویل جنگ کے خاتمے کا اعلان کیا ہے۔ اس وقت افغانستان میں ابھی بھی تقریبا 2500 امریکی فوجی اور 7،000 اتحادی فوجیں موجود ہیں۔

پچھلے سال فروری میں امریکی فوج نے اپنے چھوٹے اڈوں کو بند کرنا شروع کیا تھا۔ اپریل کے وسط میں، بائیڈن انتظامیہ نے یکم مئی کو انخلا کے آخری مرحلے کے آغاز کا اعلان کیا تھا جو 11 ستمبر سے پہلے مکمل کیا جائے گا۔