.

افغانستان سے غیرملکی افواج کا انخلا؛ آسٹریلیا کابل میں سفارت خانہ بند کر رہا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

آسٹریلیا نے افغانستان سے غیر ملکی افواج کے انخلا کے پیش نظر کابل میں اپنا سفارت خانہ بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

آسٹریلوی وزیر اعظم اسکاٹ موریسن نے سوموار کے روز پریس کانفرنس میں بتایا ہے کہ کابل میں سفات خانہ آیندہ تین روز کے اندر بند کر دیا جائے گا اور آسٹریلیا 28 مئی سے افغانستان میں اپنا سفارتی کام بند کر دے گا۔

اسکاٹ موریسن نے کہا کہ افغانستان سےغیرملکی افواج کے انخلا کے بعد حالات غیر یقینی صورت حال کا شکار ہوں گے اور آسٹریلیا کے سفارتی مشن کی سکیورٹی یقینی نہیں ہوگی۔البتہ سفارت خانہ بند کرنے کا فیصلہ عارضی ہے، مستقبل میں حالات ٹھیک ہونے پرسفارت خانہ دوبارہ کھولیں گے۔

انھوں نے واضح کیا کہ آسٹریلیا افغانستان اور اس کے عوام کی مدد وحمایت کے لیے اپنے عزم سے منحرف نہیں ہو رہا ہے۔

آسٹریلیا کے وزیر اعظم اسکاٹ موریسن
آسٹریلیا کے وزیر اعظم اسکاٹ موریسن

آسٹریلوی وزیر اعظم نے کہا کہ سفارت خانہ بند ہونے کے بعد آسٹریلیا عبوری اقدام کے تحت افغانستان میں سفارتی نمایندگی کے لیے وزیٹنگ ایکریڈیشن طریقہ کار بحال کرے گا،۔یہی طریقہ اس نے 1969 سے 2006 تک استعمال کیا تھا۔

واضح رہے کہ امریکا نے افغانستان سے رواں برس 11ستمبر تک فوجی انخلا مکمل کرنے کا اعلان کر رکھا ہے۔ اس وقت افغانستان میں امریکا اور نیٹو کے تقریباً دس ہزار فوجی تعینات ہیں، نائن الیون کے بعد افغانستان میں آسٹریلیا کے ہزاروں فوجی مختلف اوقات میں تعینات رہے تھے۔تاہم اس وقت نیٹو اتحادی کی حیثیت سے اس کے صرف 80 فوجی ہی وہاں موجود ہیں۔