.

شام میں صدارتی انتخابات میں منظم دھاندلی کی تیاری کی گئی ہے:امریکا، یورپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا اور بڑی یورپی طاقتوں نے شام میں آج ہونے والے صدارتی انتخابات کے انعقاد سے قبل کہا ہے کہ شام میں صدارتی چناؤ میں منظم انداز میں دھاندلی کی تیاری کی گئی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ شام میں آج بدھ 26 مئی کو ہونے والے صدارتی انتخابات آزادانہ اور منصفانہ نہیں ہوں گے۔

فرانس ، جرمنی ، اٹلی ، برطانیہ اور امریکا کے وزرائے خارجہ نے کل منگل کو ایک بیان میں کہا ہے کہ بدھ کے روز شامی رجیم کی نگرانی میں ہونے والے صدارتی انتخابات آزاد یا منصفانہ نہیں ہوں گے کیونکہ اسد رجیم نے الیکشن میں دھاندلی کی پوری تیاری کررکھی ہے۔ انہوں نے شام کے صدر بشار الاسد کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم یہ واضح کرنا چاہتے ہیں کہ شام میں چھبیس مئی کو ہونے والے صدارتی انتخابات آزاد یا منصفانہ نہیں ہوں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم ان تمام شامی باشندوں، سول سوسائٹی کی تنظیموں اور دیگر افراد کی آوازوں کی حمایت کرتے ہیں جنہوں نے انتخابی عمل کو غیر قانونی قرار دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم عالمی برادری سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اسد حکومت کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا نوٹس لیتے ہوئے شام میں اقوام متحدہ کی نگرانی اور اپوزیشن کی شمولیت کو یقینی بناتے ہوئے شام میں انتخابات کرائے جائیں۔

خیال رہے کہ شام میں ہونے والے صدارتی انتخابات میں اپوزیشن کو حصہ لینے کی اجازت نہیں دی گئی، اپوزیشن کی ایک چھوٹی سی جماعت کے رہ نما محمود احمد مرعی اور ایک سابق نائب وزیر عبداللہ سلیم عبداللہ بشارالاسد کے مقابلے میں الیکشن میں حصہ رہے ہیں۔