.

امریکی وزیر خارجہ عن قریب خلیجی ممالک سے بھی مشاورت کریں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ انٹنی بلنکن نے کہا ہے کہ غزہ میں اسرائیل اور فلسطینی دھڑوں کے درمیان فائر بندی کا آغاز ہے اختتام نہیں۔ اپنے مشرق وسطی کے دورے کے اختتام پر اردن کے دارالحکومت سے ایک پریس کانفرنس میں انہوں نے مزید کہا کہ تمام فریقین کے لیے ضروری ہے کہ جنگ بندی پر عمل کریں۔

انٹنی بلنکن نے کہا کہ وہ آنے والے دنوں میں خطے میں تشدد کو کم کرنےکے لیے خلیجی ریاستوں سے مشاورت کریں گے۔

اردن کے شاہ عبداللہ نے امریکی وزیر خارجہ انٹننی بلنکن سے ملاقات کے دوران بائیڈن انتظامیہ کے مشرقی یروشلم میں اپنے قونصل خانے کو دوبارہ کھولنے کے اقدام کا خیرمقدم کیا۔ اس ملاقات کے دوران اردن کے بادشاہ نے دو ریاستی حل پر مبنی منصفانہ اور جامع امن کے قیام کے لیے واشنگٹن کے اہم کردار کی تعریف کی۔

اس موقعے پر امریکی وزیر خارجہ نے کہا کہ یروشلم میں امریکی قونصل خانے کو دوبارہ کھولنے کے لیے کچھ وقت کی ضرورت ہے۔ بلنکن نے غزہ اور اسرائیل کے درمیان جنگ بندی تک پہنچنے میں اردن کے کردار کی تعریف کی۔

اس سے پہلے بلنکن نے مصر کا دورہ کیا اور صدر السیسی سے ملاقات کی۔ بعد میں مصری ایوان صدر نے بتایا کہ غزہ کی پٹی میں تعمیر نو شروع کرنے کے لیے ایک معاہدہ طے پایا ہے۔
بلنکن نے امریکی محکمہ خارجہ کو ایک بیان میں کہا کہ قاہرہ فلسطینی علاقوں میں تشدد کے واقعات سے نمٹنے کے لیے ایک موثر شراکت دار ہے۔ امن کے حصول کے لیے اس کے ساتھ مل کر کام کرے گا۔

العربیہ ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ بلنکن نے اس دورے کے دوران اسرائیل اور غزہ کے دھڑوں کے مابین طویل مدتی صلح کی مصری کوششوں پر تبادلہ خیال کیا۔