.

پندرہ ماہ کی بندش کے بعد دبئی ہوائی اڈے کے ٹرمینل نمبر1 کو کھول دیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کرونا وبا میں کمی کے نتیجے میں دبئی ہوائی اڈے کے آپریٹرز کو توقع ہے کہ آنے والے دنوں میں مسافروں کا سیلاب آسکتا ہے۔وبا میں کمی کے بعد دبئی انٹرنیشنل ایئرپورٹ سے رواں سال 28 ملین مسافروں کی آمد کا امکان ہے جس میں گذشتہ برس کی نسبت آٹھ فی صد اضافے کی توقع کی جا رہی ہے۔

دبئی انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر ٹرمینل 1 جمعرات کو دوبارہ کھول دیا گیا۔ یہ ٹرمینل کرونا وبا کی وجہ سے15 مہینوں کے بعد کھولا گیا ہے۔ بندش کے دوران ہوائی اڈے کے ٹرمینل دو اور تین کو فعال رکھا گیا۔

بئی کے ہوائی اڈے کے چیف ایگزیکٹو نے اتوار کے روز رائٹرز کو بتایا کہ لوگوں کا خیال ہے کہ مسافروں کی واپسی واپسی سست روی سے ہوگی۔ میراخیال مختلف ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ دبئی کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر مسافروں کا ایک سیلا آنے والا ہے۔

پال گریفتھس نے مزید کہا کہ دُنیا کے مصروف ترین ہوائی اڈے کو اس سال اگر ہم واقعی خوش قسمت ہیں تو 40 ملین سے زیادہ مسافروں کا ہدف پورا کرسکتے ہیں، لیکن ممکن ہے کہ مسافروں کی تعداد 24.7 اور 34.3 ملین کے درمیان ہو۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمینں تقریبا 28 ملین مسافروں کی امید ہے۔

ہوائی اڈے پر ٹرمینل 1 کی سالانہ گنجائش 18 ملین مسافروں پر مشتمل ہے۔ ہوائی اڈےپر مجموعی طور پر سالانہ 100 ملین مسافروں کو آمد ورفت کی سہولت دی جا سکتی ہے۔

گریفتھس نے اندازہ لگایا ہے کہ ٹرمینل کو دوبارہ کھولنے سے ہوائی اڈے پر ملازمت کے3500 مواقع پیدا ہوں گے۔ جن میں پرچون ، مہمان نوازی ، سیکیورٹی اور امیگریشن کارکن شامل ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ کرونا وبا کے زوال کے بعد دبئی ایئرپورٹ سے 260 مختلف روٹس پر 90 فی صد پروازیں بحال ہوسکتی تھیں۔ اس وقت63 فی صد پروازیں بحال ہوئی ہیں۔

دبئی نے بدھ سے بھارت ، نائیجیریا اور جنوبی افریقہ کے مسافروں پر کچھ پابندیاں نرم کرنے کا اعلان کیا ہے۔