.

مصر میں مقتول خاتون کے شوہر اور اجرتی قاتل کو سزائے موت کا حکم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے شمالی علاقے المنصورہ کی ایک فوجی عدالت نے شوہر کی ساز باز سے بیوی کی عصمت دری اور قتل کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے مقتولہ خاتون کے عراقی شوہر اور اجرتی قاتل کو سزائے موت سنائی گئی ہے۔

خیال رہے کہ ایک سال قبل مصر میں پیش آنے والے اس واقعہ کے نتیجے میں عوام میں شدید غم وغصے کی لہر دوڑ گئی تھی۔ واقعے کی تفصیلات کے مطابق مصر میں مقیم ایک عراقی باشندہ ایک اور خاتون سے شادی کے لیے پہلے بیوی سے جان چھڑانا چاہتا تھا مگر اس کے پاس اس کا کوئی طریقہ نہیں تھا۔ اس نے ایک بے روزگار شخص کو پیسے دیے کہ وہ اس کی بیوی کو ریپ کرے اور اس کی ویڈیو بنائے تاکہ وہ ویڈیو دکھا کر بیوی کو بلیک میل کرے تاکہ اس سے جان چھڑائی جا سکے۔ اجرتی مجرم نے خاتون کی عصمت دری کے بعد مزاحمت پر اسے قتل کر دیا تھا۔ بعد ازاں پولیس کی تحقیقات میں اس سارے واقعے کی حقیقت سامنے آ گئی تھی۔

شوہر
شوہر

گذشتہ روز عدالت نے ملزم احمر رضا الشحات اور مقتولہ ایمان عادل کے شوہر حسین محمد عبداللہ کے خلاف جاری مقدمہ کا فیصلہ سناتے ہوئے انہیں سزائے موت کا حکم دیا ہے۔ یہ واقعہ ایک سال قبل الدقھلیہ گورنری کے علاقے میت میں پیش آیا تھا۔

اجرتی قاتل
اجرتی قاتل

فیصلہ سناتے ہوئے جج نے کہا کہ یہ ایک ایسا سنگین جرم ہے جس نے مصری قوم کو شدید صدمے سے دوچار کیا ہے۔ اس جرم کا آغاز خاتون کی عصمت ریزی سے ہوا اور شوہر کی ملی بھگت سے خاتون کو قتل کیا گیا۔ اجرتی قاتل نے خاتون کے قتل کے وقت خواتین کا بھیس بدل رکھا تھا۔

گذشتہ برس جون میں پیش آنے والے اس واقعے کے مرکزی ملزم نے ایک سازش کے تحت بیوی کو قتل کرنے کا اعتراف کیا تھا۔ اس نے پولیس کو بیان دیتے ہوئے کہا کہ ایک اور خاتون سے شادی کے لیے بیوی کو قتل کرایا۔ اس نے کہا کہ بیوی کے ریپ کی ویڈیو اس لیے بنائی تاکہ اس کے مالی حقوق سے جان چھڑائی جا سکے۔ اس مقصد کے لیے ایک بے روزگار شخص کو رقم دے کر اسے گھر میں داخل کرایا۔ اس موقع پر خاتون نے اپنی عفت کا دفاع کرنے کی پوری کوشش کی جس پر ملزم نے خاتون کو جان سے مار ڈالا۔

عدالتی کارروائی کا منظر
عدالتی کارروائی کا منظر

مقتولہ کے بھائی احمد عادل نے العربیہ ڈاٹ نیٹ بتایا تھا کہ ان کے عراقی نژاد بہنوئی نے میت عنتر گاؤں کے موثر لوگوں کی سفارشوں اور مسلسل کوشش کے بعد ہماری بہن سے شادی کی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ ایمان عادل نے لوگوں کی طرف سے بار بار کے اصرار کے بعد اس شخص سے شادی کی حامی بھری تھی۔

مقتولہ کا بیٹا
مقتولہ کا بیٹا