.

ترکی کا نام بچوں کی بھرتی میں ملوث ممالک کی امریکی فہرست میں درج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا نے ترکی کا نام اُن ممالک ک فہرست میں شامل کر لیا ہے جو گذشتہ برس بچوں کو عسکری سرگرمیوں کے لیے استعمال کرنے میں ملوث رہے۔ یہ پہلا موقع ہے جب نیٹو اتحاد کے کسی رکن ملک کا نام اس فہرست میں درج ہوا ہے۔ غالبا گمان ہے کہ جمعرات کے روز کیا جانے والا یہ اقدام انقرہ اور واشنگٹن کے درمیان کشیدگی میں اضافہ کرے گا۔

سال 2021ء کے لیے انسانی تجارت سے متعلق اپنی ایک رپورٹ میں امریکی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ ترکی نے شام میں "سلطان مراد" گروپ کو "نمایاں سپورٹ" پیش کی۔ یہ شام میں اُن اپوزیشن گروپوں میں سے ہے جن کو ترکی ایک طویل عرصے سے سپورٹ کر رہا ہے۔ واشنگٹن کا کہنا ہے کہ سلطان مراد گروپ ان جماعتوں میں شامل ہے جنہوں نے بچوں کو بھرتی کیا اور انہیں بطور عسکری اہل کار استعمال کیا۔

ٹیلی فون پر صحافیوں کے لیے دی گئی بریفنگ میں وزارت خارجہ کے ایک سینئر عہدے دار نے لیبیا میں بھی بچوں کو بطور فوجی استعمال کیے جانے کا حوالہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ واشنگٹن اس مسئلے کے علاج کے لیے انقرہ کی جانب سے تعاون کی امید رکھتا ہے۔

امریکی وزارت خارجہ کی رپورٹ کے مطابق "بچوں کی بھرتی ممنوع ہونے سے متعلق قانون کی فہرست" میں درج حکومتوں کو مخصوص سیکورٹی امداد اور فوجی ساز و سامان کی تجارت کے لیے اجازت نامے پیش کیے جانے کے حوالے سے پابندیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

ابھی تک یہ واضح نہیں کہ اس قانون کے تحت آیا ترکی پر خود کار طریقے سے پابندیوں کا اطلاق ہو جائے گا۔