.
غزہ وحماس

اسرائیل پر آتش گیرغباروں کے جواب میں اسرائیلی فوج کی غزہ پر بمباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوج نے فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی سے یہودی بسیتوں پر آتش گیر گیسی غبارے چھوڑنے کے بعد غزہ میں فلسطینی مزاحمتی مراکز پر بمباری کی ہے۔

مقامی فلسطینی ذرائع نے بتایا کہ تازہ بمباری میں جنوبی غزہ میں نتساریم کے مقام پر’بدر‘ کیمپ کو نشانہ بنایا گیا۔ ادھر شمالی غزہ میں اسرائیل نے ایک ڈرون طیارے سے کم سے کم ایک میزائل داغا۔

درایں اثنا فلسطینی نیوز ایجنسی کے مطابق جنوبی غزہ میں اسرائیلی جنگی طیاروں نے کم سے کم دو مقامات پر میزائل گرائے جس کے نتیجے میں عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے تاہم کسی قسم کے جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی۔

ادھر اسرائیلی میڈیا نے عسکری ذریعے کے حوالے سے بتایا ہے کہ فوج نے غزہ کی پٹی پر آتش گیر غبارے چھوڑںے کے جواب میں بمباری کی ہے۔

جمعہ کےروز غزہ کی پٹی سے داغے گئے آتش گیر غباروں نے جنوبی اسرائیل میں کھیتوں میں آگ بھڑکا دی تھی۔ آگ بجھانے کے لیے اسرائیلی فائر بریگیڈ کو طلب کرنا پڑا تھا۔

اسرائیلی فائر بریگیڈ کے مطابق غزہ کی سرحد کے قریب اشکول کے مقام پر لگنے والی آگ پر قابو پالیا گیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ آگ غزہ سے چھوڑے گئے آتش گیر غباروں کے نتیجے میں لگی۔

جمعرات کو غزہ کی پٹی سے چھوڑے آتش گیر غباروں سے چار مقامات پر آگ بھڑک اٹھی تھی۔

جمعہ کی صبح کو اسرائیلی فوج نے غزہ کی پٹی میں اسلحہ سازی کے ایک کارخانے پر بمباری کی۔ یہ کارخانہ فلسطینی تنظیم حماس کے زیرانتظام بتایا جاتا ہے۔

اکیس مئی کو حماس اور اسرائیل کے درمیان گیارہ روزہ لڑائی کے بعد جنگ بندی پر اتفاق کیا گیا تھا۔ اس لڑائی میں66 فلسطینی بچوں سمیت 260 فلسطینی شہید جب کہ فلسطینیوں کے راکٹ حملوں میں 13 اسرائیلی ہلاک ہوئے تھے۔