.

کووِڈ-19: یواے ای میں ہر10 میں سے چارصارفین سے آن لائن فراڈ کی کوشش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات میں گذشتہ ایک سال کے دوران میں ہر دس میں سے چار صارفین سے آن لائن فراڈ کی کوشش کی گئی ہے جبکہ اس ملک میں لوگوں کے ڈیجیٹل لین دین پر اعتماد اور بھروسے میں اضافہ بھی ہوا ہے۔

دبئی پولیس ، دبئی اکانومی اور ویزا نے کروناوائرس کی وبا کے تناظر میں آن لائن لین دین میں لوگوں کے طرزعمل کی جانچ کے لیے ایک سروے کیا ہے۔’2021ء میں محفوظ رہیں‘ کے عنوان سے سروے میں یو اے ای کے 39 فی صد صارفین نے کہا ہے کہ ان سے آن لائن فراڈ کی کوشش کی گئی ہے،27 فی صد کو دھوکا دہی کا تجربہ ہوا ،19 فی صد کے ساتھ کریڈٹ کارڈ کا فراڈ ہوا اور 17 فی صد کو آن لائن خریداری پر جعلی اشیاء موصول ہوئی ہیں۔

یواے ای کے قانون نافذ کرنے والے اداروں پر اعتماد کے ضمن میں سروے میں شامل بیان پرنصف شرکاء کا کہنا تھا کہ وہ فراڈ کی صورت میں مقامی حکام سے رابطہ کریں گے۔

اس سروے کے مطابق یو اے ای میں صارفین کی جانب سے خریداری پر نقدرقوم کی ادائی میں کمی واقع ہوئی ہے اور لوگ اب ڈیجیٹل ذرائع سے رقوم کی ادائی کو ترجیح دے رہے ہیں۔ای کامرس اور بالمشافہ رابطے کے بغیررقم ادا کرنے کے رجحان میں اضافہ ہوا ہے جبکہ اشیاء کی وصولی کے وقت رقوم ادا کرنے کے رجحان میں 75 فی صد کمی واقع ہوئی ہے۔

سروے کے مطابق یواے ای میں قریباً 63 فی صد صارفین نے رقوم کی ڈیجیٹل ادائی پر بھرپوراعتماد کا اظہار کیا ہے۔ان میں 60 فی صد صارفین کا کہنا تھا کہ انھیں اس طرح آن لائن رقم کی منتقلی میں سہولت رہتی ہے،59 فی صد کے نزدیک اس طرح تیزی سے لین دین ہوجاتا ہے۔

بائیومیٹرک تصدیق کے ذریعے رقوم کی ادائی (موبائل والٹس) پر 67 فی صد صارفین نے اعتماد کا اظہار کیا ہے اور 60 فی صد نے اس کو محفوظ قراردیا ہے لیکن ان میں زیادہ تعداد ایسے افراد کی تھی جو ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کے استعمال میں کماحقہ مہارت رکھتے ہیں۔

تاہم جن لوگوں کو ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کا کوئی زیادہ علم نہیں،انھوں نے اس کے بارے میں اپنے خدشات کا اظہار کیا ہے۔ان میں سے 47 فی صد کی رائے میں چوری یا گم شدہ ڈیبٹ کارڈ کا غلط استعمال کیا جاسکتا ہے۔