امریکی سینیٹ : خامنہ ای اور ایرانی صدر کے خلاف پابندیوں کے لیے قانونی بل پیش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکا میں ریپبلکن سینیٹر ٹیڈ کروز نے ایرانی رہبر اعلی علی خامنہ ای اور صدر ابراہیم رئیسی کو سزا دینے کے لیے ایک قانونی بل پیش کیا ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ اس بل میں ایرانی نظام حکومت پر حقیقی پابندیاں عائد کیا جانا شامل ہے۔

کروز نے امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ وہ ایران پر دباؤ کے باقی ماندہ ذرائع سے بھی دست بردار ہونے کی کوشش کر رہی ہے۔

کروز کے مطابق علی خامنہ ای ایرانی عوام کے خلاف تشدد اور فتنے کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں جب کہ صدر رئیسی لاکھوں ایرانیوں کے خلاف قتل عام کے ذمے دار ہیں۔

ریپبلکن سینیٹر نے زور دیا کہ دونوں شخصیات کو امریکی پابندیوں کی لپیٹ میں لینے اور ایرانی نظام حکومت کی شرپسند سرگرمیوں پر روک لگانے کی ضرورت ہے۔

اس قانونی بل کو پیش کرنے میں ٹیڈ کروز کو کئی دیگر سینیٹروں کی بھی حمایت حاصل ہے۔

ابراہیم رئیسی
ابراہیم رئیسی

ابراہیم رئیسی کی جیت کے فوری بعد ایمنیسٹی انٹرنیشنل نے انسانیت کے خلاف جرائم کے ارتکاب کے سلسلے میں نئے ایرانی صدر کی سرزنش کا مطالبہ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں