.

کووِڈ-19؛بھارت سے ڈاکٹروں اورنرسوں کی خصوصی پروازوں سے یواے ای میں واپسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارت سے تعلق رکھنے والے دسیوں ڈاکٹر، نرسیں اور معاون طبی عملہ کے ارکان خصوصی اجازت نامہ ملنے کے بعد متحدہ عرب امارات میں واپس آنا شروع ہوگئے ہیں۔ وہ یو اے ای کی کووِڈ-19 کی وَبا کے خلاف جنگ میں طبی عملہ کا ہاتھ بٹائیں گے۔

یو اے ای کے این ایم سی ہیلتھ کیئر گروپ سے تعلق رکھنے والے نگہداشت کے عملہ کے ارکان کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے عاید کردہ سفری پابندیوں کی وجہ سے اپنی آبائی ملک میں پھنس کر رہ گئے تھے۔

اب این ایم سی نے خصوصی چارٹرطیاروں کے ذریعے اپنے دسیوں ورکروں کو بھارت سے واپس لانے کا اہتمام کیا ہے۔جون کے اوائل میں آٹھ نشستوں والے چارٹرطیارے کے ذریعے قلب اور پھیپھڑوں کے امراض کے ماہرین اورشعبہ انتہائی نگہداشت میں کام کرنے والے ماہرین کویواے ای میں واپس لایا گیا تھا۔

ابوظبی میں آمد پر ان کے ٹیسٹ کیے گئے تھے اورانھیں لازمی قرنطین میں رکھا گیا تھا۔اس کے بعد انھوں نے طبی خدمات انجام دینا شروع کردی تھیں۔

بھارت سے ایک اور پرواز کے ذریعے گذشتہ ہفتے این ایم سی کے طبی عملہ کے 49 ارکان کو واپس یواے ای منتقل کیا گیا تھا۔ان میں سے 31 دبئی میں واقع این ایم سی کے مختلف اسپتالوں کام کرتے ہیں۔اس وقت یہ تمام ڈاکٹر اور طبی عملہ کے ارکان قرنطین میں ہیں اور بہت جلد اسپتالوں میں خدمات انجام دیں گے۔

منگل کے روز ائیرعربیہ کی دو خصوصی پروازوں کے ذریعے کوچی اور ٹرایونڈرم سے شارجہ میں این ایم سی رائل اسپتال کےعملہ کے 20 ارکان کو لایا گیا تھا۔آیندہ ہفتے بھارت کے مختلف شہروں سے ڈاکٹروں، نرسوں اور شعبہ طب سے وابستہ دوسرے افراد کو بھی یواے ای میں منتقل کیا جائے گا۔