.

لبنان: ایندھن کی قلت پر لڑائی جھگڑوں میں تین افراد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں ایندھن کی قلت پر لوگوں میں لڑائی جھگڑوں کے واقعات اب معمول بنتے جا رہے ہیں اور دوشہروں میں دھینگا مشتی اور لڑائی کے واقعات میں تین افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

لبنانی فوج کے ایک بیان کے مطابق شمال میں واقع علاقے دانیہ میں پیٹرول بھروانے کے لیے توتکار لڑائی میں تبدیل ہوگئی اوراس میں ایک شخص ماراگیا ہے۔طرابلس میں بھی ایندھن پرلڑائی ہوئی ہے اور دو افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

لبنان میں اقتصادی بحران ان سنگین صورت اختیارکرچکا ہے اور گذشتہ دو سال میں کرنسی کی قدر میں 90 فی صد تک کمی واقع ہوچکی ہے۔اس کے نتیجے میں ملک میں ایندھن ، بجلی اور ادویہ میں قلّت بڑے بحران کی شکل اختیار کرگئی ہے۔

لبنان بھرمیں اس ہفتے کے دوران میں ایندھن مزید کم یاب ہوگیا ہے،جنریٹروں کو چلانے کے لیے بھی پیٹرول اور ڈیزل دستیاب نہیں ہے اور گیسولین اسٹیشنوں پر لوگوں کی لمبی قطاریں نظرآئی ہیں۔

دریں اثناء لبنان میں ایک مرتبہ پھر نئی کابینہ کی تشکیل کے معاملے پرتعطل پیدا ہوگیا ہے اور نامزد وزیراعظم نجیب میقاتی ابھی تک وزراء کا انتخاب نہیں کرسکے ہیں۔ مقامی میڈیا کے مطابق اس دوران میں ملک کےمختلف علاقوں میں احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے اور لوگ ایندھن کی قلّت اور اشیائے ضروریہ کی قیمتوں کے خلاف احتجاجی مظاہرے جاری ہیں۔

لبنانی حکومت نے بحران کے بعد زرِتلافی پر ایندھن مہیا کرنا شروع کردیا تھا لیکن حال ہی میں اس نے ایندھن کی قیمتوں میں اضافہ کردیا ہے۔جون میں لبنان کے مرکزی بنک نے حکومت سے ایندھن کی درآمدات کے لیے اپنے زرِمبادلہ کے لازمی ذخائر کو استعمال کرنے کی اجازت طلب کی تھی۔