.

ترکمانستان : گھر میں انٹرنیٹ کے لیے قرآن کریم پر قسم اٹھانا لازم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکمانستان وسطی ایشیا میں ایران اور افغانستان کے پڑوس میں واقع ریاست ہے۔ اس کا شمار دنیا بھر میں عوام کے سب سے زیادہ حقوق سلب کرنے والے ممالک میں ہوتا ہے۔ ترکمانستان کا دعوی ہے کہ اس کی آبادی 62 لاکھ ہے جب کہ درحقیقت یہاں 30 لاکھ سے بھی کم نفوس بستے ہیں۔ اس کا کُل رقبہ 4.91 لاکھ مربع کلو میٹر ہے۔ یہ شام کے رقبے سے 3 گُنا اور لبنان کے رقبے سے 47 گُنا بڑا ہے۔ ترکمانستان دنیا میں قدرتی گیس کے تیسرے بڑے ذخائر رکھتا ہے۔

چند روز قبل اس ملک میں ایک انوکھا فیصلہ سامنے آیا۔ اس کے تحت جو کوئی بھی اپنے گھر میں انٹرنیٹ کی خدمت طلب کرے گا اسے قرآن کریم پر ہاتھ رکھ کر یہ قسم کھانا ہو گی کہ وہ ممنوعہ ویب سائٹس کو دیکھنے کے لیےVPN ایپلی کیشن کا استعمال نہیں کرے گا۔

برطانوی اخبار دی ٹائمز کے مطابق یہ فیصلہ ملک کے صدر "قربان قلی بردی محمدوف" کے حکم پر کیا گیا۔ موصوف دانتوں کے ڈاکٹر ہیں اور نرالی عادات و اطوار کے مالک ہیں۔ وہ 64 برس پہلے دارالحکومتAşgabat میں پیدا ہوئے۔ قربان 2007 ملک کے صدر بنے اور پھر 2012ء میں دوسری مدت کے لیے اس منصب پر برا جمان ہوئے۔ بعد ازاں 2017 میں "بآسانی" تیسری بار کرسی صدارت سنبھال لی۔

واضح رہے کہ ترکمانستان میں " ٹوئیٹر" ، "فیس بک" اور دیگر سوشل میڈیا کو انتہائی کڑی نگرانی میں استعمال کی اجازت دی گئی ہے۔

ترکمانستان کے صدر پرانی کلاسیکل گاڑیوں ، گھوڑوں کی دوڑ اور ریپ موسیقی کے دیوانے ہیں۔ گذشتہ برس برطانوی اخبار گارڈین کی رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ صدر قربان نے دارالحکومت میں اپنا سونے کے پتوں سے بنا ایک مجسمہ لگانے کا حکم دیا تھا۔ اس کی تعمیل میں ان کا 28 میٹر بلند ایک مجمسہ نصب کیا گیا۔

اسی طرح صدر نے اپنی کتوں کی پسندیدہ نسل Alabai سے محبت کے اظہار کے لیے حکم دیا کہ ان کے پسندیدہ ترین کتے کا ایک مجسمہ نصب کیا جائے۔ یہ مجسمہ دارالحکومت کے ایک اہم مقام پر لگایا گیا۔