.

دبئی کے ہوٹل عالمی نمائش 2020ء سے قبل کمائی ’بمپرسیزن‘ کے لیے تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دبئی میں آیندہ ماہ سے منعقد ہونے والی عالمی نمائش 2020ء کے دروازے دنیا پر کھلنے سے پہلے اس امارت میں واقع ہوٹل سیاحت سے کمائی کے ایک بمپرسیزن کے لیے تیار ہیں۔

نمائش کے منتظمین کے مطابق چھے ماہ کے دوران میں ڈھائی کروڑسیاحوں کی دبئی میں آمد کی پیشین گوئی کی گئی ہے۔دبئی کے ہوٹل مالکان کا کہنا ہے کہ بین الاقوامی مہمانوں کی آمد سے مہمان نوازی کے شعبے کوفروغ ملے گا۔

دبئی نمائش گاہ کے قریب واقع ہوٹلوں میں سے ایک ریڈیسن دبئی دماک ہلز کے جنرل منیجرسدھارتھ ستناتھن
نے العربیہ انگلش کو بتایا کہ ایکسپو کی الٹی گنتی کے ساتھ ان کے ہاں بکنگ بھی شروع ہوچکی ہے۔

انھوں نے کہاکہ ’’ہمارے پاس زبانی طورپر دنیا بھر سے بڑے گروپوں کی جانب سے معلومات حاصل کی جارہی ہیں اور بکنگ بھی جاری ہے۔امید ہے،موجودہ سفری پابندیاں کم ہوں گی تو ہمارے پاس نمائش میں شرکت کرنے والے وفود کی جانب سے پوچھ تاچھ تو ہوگی،ساتھ ہی بہت سے سیاح کمرے بُک کرنے کی کوشش کریں گے۔‘‘

انھوں نے کہا کہ ’’دنیا بھر سے پویلین اور وفود اپنی آمد کے بعد دبئی اور متحدہ عرب امارات کی جانب سے پیش کردہ مختلف ترغیبات کو ملاحظہ کریں گے اوران کا تجربہ کریں گے۔وہ خوب صورت موسم میں تمام نظاروں سے لطف اندوزہوں گے۔‘‘

ان کا کہنا تھا کہ نمائش 2020ء سے یو اے ای میں مہمان نوازی کے شعبے میں آمدنی بڑھانے میں مدد ملےگی۔کووِڈ-19 کی وبا کے عروج کے دوران میں یہ شعبہ بری طرح متاثر ہوا ہے۔

کووِڈ-19 کے بعد بحالی

انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں ہوٹل مالکان خود کو خوش قسمت سمجھ سکتے ہیں کیونکہ اماراتی حکومت اور محکمہ سیاحت و تجارتی مارکیٹنگ (ڈی ٹی سی ایم) نے اس وبا سے نمٹنے میں صنعت کی بہت مددومعاونت کی ہے۔ اب کھانے پینے کے کاروباروں میں تیزی آرہی ہے، خاص طور پر ریستورانوں میں مہمانوں کی تعداد پر پابندیوں میں نرمی کی گئی ہے۔

سدھارتھ ستناتھن کے بہ قول بہت سے بین الاقوامی سیاح ایکسپو کو دیکھنے آئیں گے۔ان سے ہوٹل آباد ہوں گے اور انھیں کرونا وائرس کی وجہ سے ہونے والے مالی خسارے پر قابو پانے میں بھی مدد ملے گی۔

دبئی اس عالمی نمائش کے موقع پر سیاحوں کو پرکشش ترغیبات پیش کررہا ہے،ان کی فہرست طویل ہے۔سیاح اپنے اپنے کم، زیادہ یا درمیانے بجٹ کے مطابق معیاری ہوٹلوں اور ریستوران میں قیام کرسکیں گے اور مختلف کھانوں سے لطف اندوز ہوسکیں گے۔

سیاحوں کو تفریحی پارک، خریداری، ایڈونچر اسپورٹس، رات کی ایک متحرک زندگی اورعالمی معیار کے کھیلوں کے مقابلوں سے لطف اندوز ہونے کی سہولتیں دستیاب ہوں گی۔وہ گالف سے لے کر کرکٹ تک سے محفوظ ماحول میں لطف اندوز ہوسکیں گے۔

اس سال نیا کھولا گیا، ریڈیسن دبئی دماک ہلز، ایک چار ستارہ ہوٹل ہے۔ یہ نمائش گاہ سے صرف ایک فرلانگ کے فاصلے پر واقع ہے اورایکسپو 2020ء دبئی کے دورے کے خواہاں لوگوں کو بہتر خدمات مہیا کرے گا۔

دبئی میں عالمی نمائش کے آغاز سے قبل دوسرے معروف ہوٹلوں سے بھی بیرونی دنیا سے لوگ رابطے کررہے ہیں۔ان میں دبئی میں ایکسپو2020 سائٹ سے قریباً 16 کلومیٹر دور واقع اسٹوڈیو ون ہوٹل بھی شامل ہے۔اس کے مارکیٹنگ اور مواصلات منیجر مشیل پورنیل کا کہنا ہے کہ ہوٹل میں ایکسپو سے متعلق بکنگ میں حالیہ دنوں میں اضافہ ہواہے۔

واضح رہے کہ مئی 2021 تک دبئی میں ہوٹلوں کے کل 128,545 کمرے تھے۔ دبئی سیاحت کے مطابق یہ اندراج 715 ہوٹلوں پر محیط تھا۔ان میں 134 فائیواسٹار ہوٹل بھی شامل تھے۔

ٹریول سائٹ انسائیڈر کی ایک تحقیق کے مطابق امارت میں ہوٹلوں کے کمرے دنیا میں سب سے زیادہ ہیں اور ایکسپو کے مہمانوں کے لیے ہوٹلوں کے کم سے کم ایک لاکھ کمرے دستیاب ہوں گے۔

دبئی ایکسپو 182 روز تک جاری رہے گی۔اس میں 200 سے زیادہ ادارے اپنے متاثرکن تجربات کا تبادلہ کریں گے۔نمائش میں دنیا کے بیشتر ممالک کے پویلین ہوں گے جہاں وہ اپنی ساختہ مصنوعات اور رنگارنگ ثقافت کو پیش کریں گے۔ان کے علاوہ کثیر جہت تنظیمیں، کمپنیاں اور تعلیمی ادارے بھی حصہ لے رہے ہیں۔