.
افغانستان وطالبان

کابل میں پاکستان مخالف مظاہرے کو طالبان نے منتشر کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغانستان میں ایک خود مختار حکومت کے مطالبے کے سلسلے میں دارالحکومت کابل میں آج منگل کو مسلسل دوسرے روز عوامی مظاہرہ دیکھا گیا۔ مظاہرین نے پاکستان کے خلاف نعرے بازی بھی کی۔ اسلام آباد پر طالبان تحریک کی عمومی حمایت کا الزام عائد کیا جاتا ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی کے مطابق طالبان عناصر نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ہوائی فائرنگ کی۔

تفصیلات کے مطابق 70 کے قریب افراد جن میں اکثریت خواتین کی تھی کابل میں پاکستانی سفارت خانے کے باہر اکٹھا ہو گئے۔ انہوں نے افغان امور میں پاکستان کی مداخلت کے خلاف نعرے بازی کی۔

پاکستان کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کے سربراہ جنرل فیض حمید کے ہفتے کے روز کابل کے دورے نے کئی سوالات کو جنم دیا ہے۔

یاد رہے کہ افغان دارالحکومت میں گذشتہ روز بھی طالبان تحریک کے خلاف مظاہرے دیکھے گئے تھے۔ یہ مظاہرے قومی مزاحمتی محاذ کے کمانڈر احمد مسعود کی کال پر ہوئے۔ واضح رہے کہ طالبان تحریک نے کل پیر کے روز ملک کے مشرق میں واقع وادی پنج شیر کے بڑے حصے پر کنٹرول حاصل کر لیا۔

گذشتہ ہفتے کے روز کابل میں درجنوں افغان خواتین نے احتجاجی ریلی نکالی تھی۔ ریلی میں شریک خواتین نے عورتوں کے حقوق کے تحفظ اور ریاست کے اعلی سرکاری منصبوں پر خواتین کے تقرر کے مطالبے کے واسطے پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے۔ طالبان عناصر نے احتجاجی ریلی کا راستہ روک کر خواتین کو صدارتی محل کی جانب جانے سے روک دیا تھا۔