.

سویڈش داعشی کو ویسے ہی جلایا جائے جیسے اس نے میرے بیٹے کو جلایا : اردنی پائلٹ کے وال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سویڈن کی ایک عدالت میں گذشتہ روز داعش تنظیم سے تعلق رکھنے والے سویڈش شہری اسامہ کریم کے خلاف عدالتی کارروائی کا آغاز ہوا۔ اسامہ 2015ء میں داعش تنظیم کے ہاتھوں ایک پنجرے میں اردن کی فضائیہ کے نوجوان پائلٹ معاذ الکساسبہ کو زندہ جلا دیے جانے کی اندوہ ناک کارروائی میں شریک تھا۔

اس سلسلے میں معاذ کے والد یوسف الکساسبہ کا کہنا ہے کہ "جب بھی ہمارے دلوں میں ہمارے بیٹے کے جلائے جانے کی آگ ٹھنڈی ہونے لگتی ہے وہ ایک بار پھر سے بھڑک اٹھتی ہے .. مجھے ایسا محسوس ہوتا ہے کہ معاذ کو آج ہی قتل کیا گیا ہے .. میں جب بھی اس قبیح عمل میں شریک کسی شخص کے گرفتار ہونے یا اس کے خلاف عدالتی کارروائی کا سنتا ہوں تو اس حوالے سے اردن کی حکومت کے موقف کا منتظر رہتا ہوں اور یہ کہ وہ ان افراد کے حوالے سے کیا کرے گی"۔

معاذ کے والد نے زور دیا ہے کہ بین الاقوامی قانون اردن کو یہ حق دیتا ہے کہ وہ ان کے بیٹے کے جلائے جانے میں شریک ہر فرد کو طلب کرے اور اردن کی سرزمین پر اس کے خلاف عدالتی کارروائی عمل میں لائے ،،، اس لیے کہ معاذ کا تعلق اردن سے ہے۔

یوسف الکساسبہ نے مزید کہا کہ " میں سویڈن کے حکام سے مطالبہ کرتا ہوں کہ اسامہ کریم کو بھی اسی طرح جلایا جائے جیسے اس نے میرے بیٹے کو جلایا تھا"۔

یاد رہے کہ سویڈن کی عدلیہ کی جانب سے شام میں مرتکب جنگی جرائم کے حوالے سے تحقیقات کا آغاز کیا ہے۔ سویڈن کی جنرل پراسیکیوشن کے ترجمان نے فرانسیسی خبر رساں ایجنسی کو بتایا کہ بین الاقوامی جرائم سے متعلق ذمے دار استغاثہ ان سنگین جنگی جرائم کے بارے میں اولین تحقیقات کر رہی ہے جن کا شام میں ارتکاب کیا گیا۔