.

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد کے اعلان کردہ ’’انسانی استعداد کارترقی پروگرام‘‘کاآغاز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے ویژن 2030ء کے تحت لیبر مارکیٹ کی ترقی کے لیے ایک نیا پروگرام شروع کیا ہے،اس قومی حکمت عملی کے تحت سعودی شہریوں کی استعداد کار میں اندرون اوربیرون ملک اضافہ کیا جائے گا۔

شہزادہ محمد بن سلمان نے اپنے اعلان میں کہا ہے کہ’’ انسانی استعداد کارترقی پروگرام‘‘مقامی اور عالمی سطح پر قومی انسانی صلاحیتوں میں مسابقانہ اضافے کے لیے مملکت کی حکمت عملی کا عکاس ہے۔اس کا مقصد دنیا میں مسابقت کے فروغ کے لیے موجودہ اور مستقبل کی لیبرمارکیٹ کو تیارکرنا ہے۔اس کے تحت افرادی قوت کو اقدار سکھائی جائیں گی،انھیں بنیادی اور مستقبل کے ہُنر اور مہارتیں سکھائی جائیں گی۔

سعودی ولی عہد نے کہا کہ ’’مجھے تمام شہریوں کی صلاحیتوں پراعتماد ہے۔یہ پروگرام معاشرے کے تمام طبقات کی ضرورتوں اوراُمنگوں کو مدنظررکھ کروضع کیا گیا ہے۔اس کا آغاز بچپن کے دور سے ہوتا ہے اور پھراس میں جامعات ، کالجوں ، ٹیکنیکل اور پیشہ ور تعلیم کے اداروں سے لیبرمارکیٹ تک پہنچنے کے ادوار کا احاطہ کیا گیا ہے۔اس کا ہدف مستقبل کے شہری تیارکرنا ہے۔اس سے علم وہُنرپر مبنی ایک ٹھوس معیشت کی تعمیر میں مدد ملے گی اور اس میں انسانی سرمائے کو بنیادی اہمیت حاصل ہوگی۔‘‘

انھوں نے اپنے اعلان میں کہا کہ اس پروگرام میں 89 اقدامات شامل ہوں گے،ان سے سعودی ویژن 2030ء کے 16 تزویراتی اہداف حاصل ہوسکیں گے۔اس پروگرام کی حکمت عملی تین ستونوں پرمبنی ہوگی:
ایک مضبوط اورتواناتعلیمی بنیاد کی تیاری۔
مقامی اورعالمی تقاضوں سے ہم آہنگ مستقبل کی لیبرمارکیٹ کی تیاری۔
مہد سے لحد تک سیکھنے کے مواقع کی دستیابی۔

اس پروگرام کے اقدامات کے تحت کم سن بچّوں کے تعلیمی اداروں (کنڈرگارٹنز)میں توسیع کی جائے گی۔اس سے تمام بچّوں کو ایک مضبوط اور توانا تعلیمی بنیاد مہیا کرنے میں مدد ملے گی۔شہریوں کی ان کے کیرئیر کے چناؤ میں مدد دینے کے لیے مشاورت اوررہ نمائی دی جائے گی۔انھیں یہ بتایاجائے گا کہ ان کے لیے مستقبل میں کون سا پیشہ بہتر رہے گا اور اس کے لیے کون سی تعلیمی صلاحیت اور استعداد کار درکار ہے۔

مزید برآں شہریوں کے لیے روزگار کے مواقع بڑھانے اور ملازمت کے حصول میں مدد دینے کے لیے کئی ایک اقدامات کیے جائیں گے۔انھیں نئی نئی مہارتیں سکھائی جائیں گی اور نئے فنون کی تعلیم کے لیے ان کی سابقہ مہارتوں سے بھی استفادہ کیا جائے گا۔ان کے علاوہ مقامی اورعالمی سطح پر لیبرمارکیٹ کے لیے نئے کاروباری اورموجدین تیار کیے جائیں گے۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق شہزادہ محمد بن سلمان کے اعلان کردہ اس پروگرام سے کئی ایک مقاصد واہداف حاصل کیے جائیں گے۔ان میں کنڈرگارٹن (بچّوں کے باغ)میں داخلے کی شرح کو 23 فی صد سے بڑھا کر 90 فی صد تک کیا جائے گا اور 2030ء تک سعودی عرب کی دوجامعات کا دنیا کی 100 سرفہرست جامعات میں شمارکرایا جائے گا۔