.

الجزائرکی الاعظم مسجد کا مینار اچانک کیسے غائب ہوا؟عوام میں شدید غصہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افریقی ملک الجزائر کے ایک اخبار کی جانب سے ملک کی مشہورالاعظم مسجد میں شائع ہونے والی تصویر پراخبار کو شدید تنقید اور سوالات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ دوسری طرف الجزائر کی وزارت مواصلات نے اسے اخبار کی پیشہ وارانہ غلطی قرار دیا ہے۔

مقامی عربی روزنامہ ’الوطن‘ میں شائع ہونے والی الاعظم مسجد کی تصویر میں مسجد کا مینار غائب ہے۔ خیال رہے کہ الجزائرکی الاعظم مسجد پورے افریقا کی سب سے بڑی مسجد ہے اور اس کا مینار دنیا بھر کی مساجد کے میناروں میں سب سے اونچا تصور کیا جاتا ہے۔

اخبار میں مینار کے بغیر مسجد کی تصویر کی اشاعت کے بعد سوشل میڈیا پر عوامی حلقوں کی طرف سے شدید رد عمل سامنےآیا ہے۔ ٹویٹر پر’ #المسجد_ الأعظم والمسجد الأعظم هويتي‘ ہیش ٹیگ مسجد_ الاعظم اور مسجد اعظم میری پہچان‘ ٹرینڈ کرتا رہا۔

پہلے اور بعد کے مناظر
پہلے اور بعد کے مناظر

بہ ظاہر ایسے لگ رہا ہے کہ تصویر کی ایڈیٹنگ کی گئی اور ایڈیٹنگ کے دوران تصویر کا مینار حذف کر دیا گیا۔

سابق صدر عبدالعزیز بوتفلیقہ نے جنازے کے جلوس میں بھی شرکا نے اخبار میں مسجد کی متنازع تصویر پر سخت برہمی کا اظہارکیا۔ الجزائر کے دوسرے اخبارات میں بھی الوطن کے اس اقدام پر تنقید کرتے ہوئے اسے صحافت کے پیشہ وارانہ اصول کی خلاف ورزی قراردیا ہے۔

الجزائر وزارت مواصلات نے اس واقعے کو "عجیب اور بلا جواز عمل" قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے۔ وزارت مواصلات نے الاعظم مسجد کی تصویر کے اچانک غائب ہونے پر اخبار کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ وزارت مواصلات نے اسے اخبار کی طرف سے مذہبی شعائر کی دانستہ خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے اس کے خلاف قانونی کارروائی کا عندیہ دیا ہے۔

دوسری طرف اخبار ’الوطن‘ اپنے ردعمل میں کہا ہے کہ یہ تصویر ایک تکنیکی غلطی کا نتیجہ ۔ اخبار نے اسے بدقسمتی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس اقدام کے پیچھے کوئی دانستہ محرک نہیں۔ یہ ایک غیر ارادہ واقعہ ہے جس پر اخبار قارئین سے معذرت خواہ ہے۔

خیال رہے کہ الاعظم مسجد افریقا کی سب سے بڑی مسجد ہے۔ اس کا مینار دنیا کا سب سے اونچا مینار قرار دیا جاتا ہے۔ اس کی اونچائی 267 میٹر (875 فٹ) ہے۔ اس کی تعمیر پر ایک ارب ڈالر لاگت آئی تھی اور اس کی تعمیر پر سات سال لگے تھے۔