.

سعودی عرب کا بجٹ خسارہ 2023ء میں سرپلس میں تبدیل ہوجائے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

العربیہ کی رپورٹ کے مطابق سعودی حکومت کو2022 میں 240.8 ارب ڈالر کی آمدن کی توقع ہے۔اس سے مملکت کا بجٹ خسارہ کم ہوکر 13.9 ارب ڈالررہ جانے کی پیشین گوئی کی گئی ہے۔

سعودی عرب کی وزارت خزانہ کو توقع ہے کہ 2022 میں معیشت میں 7.5 فی صد کی شرح سے اضافہ ہوگا۔مملکت کا رواں سال کا بجٹ خسارہ قریباً 22.6 ارب ڈالر ہے جبکہ یہ پیشین گوئی کی گئی تھی کہ اس سال بجٹ خسارہ 37.6 ارب ڈالر تک ہوگا۔اس طرح بجٹ خسارے کی رقم کوئی 15 ارب ڈالر کم ہے۔

حکومت کو توقع ہے کہ 2023ء تک بجٹ خسارہ ختم ہو جائے گا۔یہ 7.2 ارب ڈالر کے سرپلس بجٹ میں تبدیل ہو جائے گا اور اس سے اگلے سال (2024ء) میں اضافی رقم بڑھ کر 11.2 ارب ڈالر ہو جائے گی۔

سعودی عرب نے اگلے سال کے دوران میں قریباً 255 ارب ڈالر کے مجموعی اخراجات کی پیشین گوئی کی ہے جبکہ رواں سال قریباً 10 کھرب (1 ٹریلین) ریال کے اخراجات کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔اس طرح مذکورہ رقم موجودہ سال کے مجموعی اخراجات سے کم ہے۔