.

متحدہ عرب امارات:سماجی ترقی مرتکز290 ارب درہم کے 4 سالہ وفاقی بجٹ کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کے نائب صدر، وزیراعظم اور حاکمِ دبئی شیخ محمد بن راشد آل مکتوم نے منگل کو کابینہ کے اجلاس میں اگلے چار سال کے لیے وفاقی بجٹ کا اعلان کیا ہے۔سماجی ترقی مرتکز اس بجٹ کا حجم 290 ارب درہم (79 ارب ڈالر) ہے۔

شیخ محمد بن راشد کے زیرصدارت اس اجلاس میں کابینہ نے 2022ء میں مجموعی طورپر 58.9 ارب درہم (16 ارب ڈالر) کے اخراجات کی منظوری دی ہے۔

یواے ای کی سرکاری خبررساں ادارے وام کے مطابق 2022 کے بجٹ کا سب سے بڑا حصہ (41.2 فی صد)ترقیاتی اور سماجی شعبے کی ترقی کے لیے مختص کیا گیا ہے۔ان میں سے تعلیم 16.3 فی صد ، سماجی ترقی 6 فی صد ، صحت 8.4 فی صد ، پنشن 8.2 فی صد اور 2.6 فی صدرقوم دیگر خدمات کے لیے مختص کی گئی ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ بجٹ کا قریباً 3.8 فی صد بنیادی ڈھانچے اورمالیاتی وسائل کے شعبے کے لیے مختص کیا گیا ہے۔

کابینہ نے یواے ای کے نائب وزیراعظم ، وزیرخزانہ اور دبئی کے نائب حاکم شیخ مکتوم بن محمد بن راشد کوجنرل بجٹ کمیٹی کاچیئرمین اورفیڈرل ٹیکس اتھارٹی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کا چیئرمین مقررکرنے کی بھی منظوری دی ہے۔

ابوظبی کے ولی عہد اور متحدہ عرب امارات کی مسلح افواج کے ڈپٹی سپریم کمانڈر شیخ محمد بن زاید نے رواں ماہ کے اوائل میں کہا تھا کہ ملک نے کووِڈ-19 کی وَبا پر’’قابو‘‘پا لیا ہےاور اب وہ ’’معمول کے حالات کی واپسی‘‘کا اعلان کرتا ہے۔

انھوں نے متحدہ عرب امارات میں بتدریج بحالی کے آثار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس نے اقتصادی معاونت کے پروگرام کا خاتمہ شروع کردیا ہے۔ یہ پروگرام کروناوائرس کی وبا کے منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے شروع کیا گیا تھا۔

یو اے ای دنیا کے ان ممالک میں سے ایک ہے جہاں کرونا وائرس سے بچاؤ کے لیے بھرپورطریقے سے ویکسین لگانے کی مہم چلائی گئی ہے۔اب تک ملک میں ویکسین کی دوکروڑ پانچ لاکھ خوراکیں لگائی جاچکی ہیں جبکہ یو اے ای میں کروناوائرس کے یومیہ کیسوں کی تعداد خاصی گھٹ چکی ہے اور گذشتہ کئی ہفتوں سے روزانہ دوسو سے بھی کم کیس ریکارڈ کیے جارہے ہیں۔