.

سفارتی بحران :یواے ای کی لبنان میں مقیم شہریوں کوجلد وطن لوٹنے کی ہدایت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کی وزارت خارجہ نے موجودہ سفارتی بحران کے تناظر میں لبنان میں مقیم اپنے شہریوں کو جلد سے جلد وطن لوٹنے کی ہدایت کی ہے۔

وزارت خارجہ نے اتوار کو ایک بیان میں کہا کہ موجودہ واقعات کی روشنی میں اور اماراتی شہریوں کے لبنان کے سفر پرپابندی اور بیروت سے سفارت کاروں کو واپس بلانے کے فیصلے کی بنیاد پرتمام شہریوں کوہدایت کی جاتی ہے کہ وہ جلد سے جلدوطن لوٹ آئیں۔

لبنانی وزیراطلاعات جارج قرداحی کے یمن جنگ میں سعودی عرب اورمتحدہ عرب امارات کے کردار کے بارے میں مخالفانہ تبصروں کی وجہ سے خلیج میں ایک نئے سفارتی بحران نے جنم لیا ہے۔سعودی عرب اور یواے ای سمیت بعض خلیجی عرب ممالک نے بیروت میں متعیّن اپنے سفیروں کو واپس بلا لیا ہے۔

دریں اثنا جارج قرداحی نے اتوارکو ایک بیان میں کہا ہے کہ ان کے مستعفی ہونے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔انھوں نے بالاصرار کہا ہے کہ کابینہ کا رکن بننے سے پہلے انھوں نے جوکچھ کہا تھااور جو تبصرے کیے، وہ ان کے ذاتی خیالات کے عکاس تھے۔

ان کے متنازع بیانات کے ردعمل میں سعودی عرب نے لبنانی سفیرکو ملک سےبے دخل کردیا ہے اورلبنان کی تمام درآمدات پر پابندی عاید کردی ہے۔ بحرین اور کویت نے بھی اس کی پیروی کی ہے اور متحدہ عرب امارات نے بھی بیروت سے اپنے سفارت کاروں کو واپس بلا لیا ہے۔متحدہ عرب امارات نے ایک روز قبل اپنے شہریوں کو لبنان کا سفر نہ کرنے کا مشورہ دیاتھا۔

سرکاری خبررساں ادارے وام کی جانب سے ہفتے کے روز جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ یواے ای نے سعودی عرب کے بارے میں لبنان کے بعض حکام کے ناقابل قبول نقطہ نظرکی روشنی میں اپنے سفارت کاروں کو واپس بلانے کا اعلان کیا ہے اور اس نے اپنے شہریوں کو جمہوریہ لبنان کا سفراختیار نہ کرنے کی ہدایت کی ہے۔