.

عرب اتحاد کی یمن میں 30 کارروائیوں میں 110 حوثی جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں آئینی حکومت کی حمایت کرنے والے عرب اتحاد نے گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران صرواح اور الجوف میں حوثی ملیشیا کے میکانزم اور عناصر کو نشانہ بنانے کے لیے تیس آپریشنز اور فضائی حملے کیے جن میں ایک سو سے زاید حوثی باغی ہلاک ہوئے ہیں۔

اتحاد نے تصدیق کی کہ کارروائیوں کے نتیجے میں 22 فوجی گاڑیوں اور ہتھیاروں کے گوداموں کو تباہ کرنے کے علاوہ ملیشیا کے ایک سو دس عناصرکو ہلاک کیا گیا۔

یمنی قومی فوج کے دستوں جنہیں عوامی مزاحمت کاروں کی حمایت حاصل ہے نے کل منگل صبح مآرب کے مغرب میں واقع صرواح میں ذنہ محاذ پر باغیوں دفاعی پوزیشنوں پر حملہ کیا۔ فیلڈ ذرائع نے "العربیہ" اور "الحدث" کو بتایا کہ فوج کی فائرنگ اور توپ خانے سے حوثی ملیشیا کے درجنوں ارکان ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔

یمن میں آئینی کی حمایت کرنے والے اتحاد کے جنگجوؤں نے حوثی کے آٹھ قافلوں اور دو ٹینکوں کو تباہ کر دیا جب کہ فوج کے توپ خانے نے جنوبی محاذ پر متعدد گاڑیوں اور عملے کو جلا دیا۔

قابل ذکر ہے کہ ایرانی حوثی ملیشیا کے خلاف عوامی مزاحمت کی حمایت سے فوجی دستوں کی طرف سے چھیڑی جانے والی پرتشدد لڑائیاں مآرب گورنری کے جنوب اور مغرب میں جنگی کارروائیوں کے پورے علاقے میں جاری ہیں۔

اس تناظر میں یمنی وزیر خارجہ احمد عوض بن مبارک نے کہا ہے کہ یمن میں جامع جنگ بندی کی ضرورت پر بین الاقوامی اتفاق رائے موجود ہے۔ بن مبارک نے ایک بیان میں مزید کہا کہ حوثی ملیشیا اپنی جارحیت اور فوجی پیش قدمی کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے اور سفارتی کوششوں کو مسترد کرتی ہے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ حوثی ملیشیا وہم کی حالت میں رہ رہی ہے۔یہ اس کی خام خیالی ہے کہ وہ مآرب گورنری کو کنٹرول کر سکتی ہے۔